امریکہ پاکستان کے ایٹمی ہتیھاروں پر قبضہ جمانے کے لیے افغانستان میں شکست کے باجود پاکستان میں اپنے پنجے گاڑھنا چاہتا ہے۔ حافظ محمد سعید

25 جولائی 2011 (06:25)
نوائے وقت ،دی نیشن اور وقت نیوز کے زیر اہتمام حمید نظامی ہال میں پاکستان کو درپیش چیلنجز اور انکا حل کے موضوع پر گفتگو کرتے ہوئے حفظ سعید کا کہنا تھا کہ امریکہ پاکستان کا دوست نہیں اور خاص طور پر ایبٹ آباد کے واقعہ کے بعد یہ بات کھل کر سامنے آگئی ہے۔ پاکستان ایٹمی طاقت ہے اور یہاں دینی قوتیں ابھر کر سامنے آ رہی ہیں جنہیں امریکہ اور یورپی ممالک دہشتگرد قرار دے رہے ہیں کیونکہ انہیں خطرہ ہے کہ اب ورلڈ آرڈر کے بجائے محمدی ورلڈ آرڈر دنیا میں رائج ہوجائے گا جس کے بعد پوری دنیا کی قیادت مسلمانوں کے ہاتھ میں ہوگی۔ حافظ محمد سعید کا کہنا تھا کہ موجودہ حکمران امریکی غلامی میں جکڑے ہوئے ہیں اور سوائے امداد لینے کے اور کچھ نہیں کر رہے ۔ہمیں اب خود انحصاری کی راہ پر چلنا ہوگا اور بیرونی مداخلت سے نجات حاصل کرنا ہوگی، اس مقصد کے لئےایسی جماعتیں سامنے لانا ہوگی جو سیاسی مفادات سے بالاتر ہو کر کام کریں، انہوں نے کہا کہ موجودہ حکمران ڈٹ کر بات کرنے کی جرات نہیں رکھے جبکہ ہماری خارجہ پالیسی اور وزیر خارجہ دونوں ہی کمزور ترین ہیں۔ ایوان وقت میں خطاب کے دوران حافظ محمد سعید کا کہنا تھا کہ امریکہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے باوجود مسئلہ کشمیر کے حل کی جانب نہیں آتا اور اب وہ بھی پاکستان کے خلاف وہی زبان استعال کر رہا ہے جو صدام کے خلاف کی گئی تھی جسکی وجہ صرف یہ ہے کہ پاکستان کے ایٹمی ہتھیار اس کے لیے خوف کا باعث ہیں اور وہ بھارت اور اسرایئل کے معاہدے بھی کروا رہا جبکہ بھارت نے اپنی سرزمین بھی اسرایئل کو دے رکھی ہے اور خود امریکہ کی شہہ پر افغانستان میں بیٹھ کر پاکستان میں شدت پسند تحریکوں کی ہر طرح سے مدد کر رہا ہے۔