گٹکہ، سگریٹ، پان نوجون نسل کی تباہی

25 جولائی 2011
مکرمی! نوجوان نسل میں جس طرح گٹکہ‘ سگریٹ اور پان کا استعمال عام ہو گیا ہے وہ مستقبل کی مہلک بیماریوں سے ناآشنا۔ خوبصورت، اچھے خاندان سے لے کر معمولی خاندان پڑھے لکھے اور مختلف فیکٹریوں میں کام کرنے والے مالک سکے لے کر معصوم عمر تک بچے جس قدر ملوث ہو گئے ہیں کہ افسوس ہوتا ہے۔ وہ گٹکا جس کی خوشبو سے پان سگریٹ اور تمباکو سے عاری شخص چکر اور سردرد چھینکوں کا مرتکب ہو جاتا ہے۔ بھارت سے ساشے کی شکل میں آتا۔ اب پاکستان کے تمباکو فروشوں نے ان کا بھی باپ گٹکا اور قوام بنا لیا ہے۔ جس پان سگریٹ کی دکان پر قوام اور گٹکہ مشہور ہو گا اسی دکان پر تل دھرنے کی جگہ نہ ہو گی۔ معصوم نوجوان اچھے گھروں کے بچے اور جوان لوگ بیس بیس پان اکٹھے اور گٹکے کی پڑیاں ایڈوانس لے لیتے ہیں۔ حکومت پاکستان کو نوجوان نسل کو بچانے کےلئے گٹکے، سگریٹ، پان کی روک تھام کےلئے ٹھوس اقدامات کرنے چاہئیں۔
(طاہر شاہ سابق فرسٹ کلاس کرکٹر دھرم پورہ لاہور)