مقبوضہ کشمیر : خاتون سمیت چار شہری شہید....گمنام قبروں کی تحقیقات اقوام متحدہ سے کرائی جائے : کشمیری قیادت عمر عبداللہ کی تجویز مسترد

25 اگست 2011
سرینگر + لندن (کے پی آئی + آئی این پی) مقبوضہ کشمیر کی قیادت نے گمنام قبروں کی تحقیقات کیلئے کٹھ پتلی وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ کا قائم کردہ ٹروتھ اینڈ ریکسی لیشن کمشن مسترد کرتے ہوئے اقوام متحدہ سے تحقیقات کرانے کا مطالبہ اور جمعة المبارک کو یوم القدس منانے کا اعلان کیا ہے جبکہ بھارتی فوج نے ریاستی دہشت گردی کے دوران مزید 5 کشمیریوںکو شہید کر دیا۔ حریت کانفرنس کے چیئرمین علی گیلانی نے کمشن قائم کرنے کی عمر عبداللہ کی تجویز کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ جو لوگ اس قتلِ عام کے ذمہ دار ہیں، ان کی تحقیقات کس طرح منصفانہ اور غیر جانبدارانہ ہو سکتی ہے؟ انہوں نے کہا کہ دریافت شدہ تمام قبریں ا±ن علاقوں میں پائی گئی ہیں، جہاں چپے چپے پر بھارتی فوج اور بی ایس ایف کیمپوں کا جال بچھا رکھا ہے۔ اس حقیقت میں رتی بھر بھی شک کی گنجائش نہیں کہ مذکورہ قبروں میں وہ بے گناہ شہری مدفون ہیں جنہیں فرضی جھڑپوں میں شہید کیا گیا۔ انہوں نے اقوام ِ متحدہ کے وار کرائم ٹربیونل یا کسی دوسرے عالمی ادارے کے ذریعے حقائق سامنے لانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ حکومتی اعلانات محض ڈھونگ اور فریب کاری ہیں۔ حکومت منہ بولتے حقائق کو مسخ کرنا چاہتی ہے تاکہ بھارت کو عالمی سطح پر بدنام ہونے سے بچایا جا سکے۔ حریت رہنما شبیر شاہ اور نیشنل فرنٹ کے چیئر مین نعیم احمد خان نے بھی عالمی سطح پر تحقیقات کے ذریعے مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچانے اور مدفون لوگوں کی شناخت کا مطالبہ کیا ہے۔ دوسری جانب بھارتی فورسز نے جھڑپوں میں خاتون سمیت مزید 4 شہریوں کو شہید کر دیا ہے۔ اسلام آبا د میں پولیس کے ایک دکاندار پر تشدد کے بعد بھارتی فورسز اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں شروع ہو گئیں جن میں متعدد افراد زخمی ہو گئے جبکہ 15 نوجوانوں کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔ اے پی اے کے مطابق مقبوضہ کشمیر کے ریاستی حقوق انسانی کمشن نے واضح کیا ہے کہ 11 رکنی ٹیم نے گمنام قبروں پر ابھی رپورٹ کو حتمی شکل دے کر ریاستی حکومت کو نہیں بھیجا۔
کشمیری قیادت