واسا نے افسروں کی بے نام فرموں کو ادائیگی کر دی‘ ٹھیکیداروں کا احتجاج

25 اگست 2011
لاہور (شعیب الدین سے) پنجاب حکومت سے سوا دو ارب کی امداد ملنے کے باوجود واسا کی مشینری کو چالو رکھنے کیلئے پرزے اور سروسز مہیا کرنیوالے ٹھیکیدار ایک برس سے ”بل“ لیکر افسران کی منت سماجت کرتے پھر رہے ہیں۔ واسا انتظامیہ نے ان ٹھیکیداروں کے 10 کروڑ سے زائد کے بل ادا کرنے کی بجائے اپنے افسران کی ”بے نام فرموں “ کو ادائیگی کر دی ہے۔ واسا کے ٹھیکیداروں نے شدید احتجاج کرتے ہوئے وزیراعلی پنجاب سے نوٹس لینے کی اپیل کی ہے۔ ٹھیکیداروں کا کہنا ہے کہ وہ واسا کو ٹیوب ویلوں‘ ڈسپوزل سٹیشنوں‘ جنریٹروں کیلئے سیوریج اور واٹر سپلائی کیلئے ضروری اشیا‘ ٹرانسفارمرز اور موٹرز کی ری وائنڈنگ جیسی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ واسا کو حکومتی امداد ملنے پر توقع تھی کہ ڈوبی رقم مل جائے گی مگر انہیں بمشکل 5 سے 10 فیصد ادائیگی کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ اب بھی پیسے نہ ملے تو وہ واسا کو مزید سامان کی سپلائی بند کر دیں گے۔
واسا / ٹھیکیدار