حافظ محمد سعید کی نظربندی ختم کر تے ہوئے انہیں رہا کر دیا گیا

24 نومبر 2017
حافظ محمد سعید کی نظربندی ختم کر تے ہوئے انہیں رہا کر دیا گیا

لاہور( خصوصی نامہ نگار) امیر جماعةالدعوة پاکستان پروفیسر حافظ محمد سعید کی نظربندی ختم کر تے ہوئے انہیں رہا کر دیا گیا ہے۔ لاہور ہائی کورٹ کے ریویو بورڈ کے فیصلہ پر عملدرآمد کرتے ہوئے جیل عملہ کے افسران کاغذی کارروائی مکمل کرنے کے بعد جوہر ٹاﺅن میں انکی رہائشگاہ پہنچے جہاں رات 12 بجکر 3 منٹ پر حافظ محمد سعید سے کاغذات پر دستخط کرائے گئے۔ یوں آج سے وہ آزاد ہوں گے اور تقریباً 10 ماہ کی نظربندی ختم ہونے کے بعد توقع ہے وہ آج نماز جمعہ پڑھائیں گے۔ حافظ محمد سعید کو 30 جنوری کو نظربند کیا گیا تھا۔ رات گئے انکی رہائشگاہ سے جیل عملہ واپس چلا گیا تاہم پولیس اہلکار سکیورٹی انتظامات کیلئے موجود ہیں۔رہائی کے بعد اپنے پیغام میں حافظ محمد سعید نے کہا سب سے پہلے ہم اپنے اللہ کا شکر ادا کرتے ہیں جس نے رہائی دی۔ ہائیکورٹ میں 3 ججوں نے فیصلہ کیا، مجھے اس بات کی خوشی ہے کہ میرے ذمہ کوئی ایسا اقدام ثابت نہیں ہوا جو میرے لئے، میرے ملک کیلئے کسی بھی قسم کا نقصان دہ ہو۔ الحمدللہ ہم سرخرو ہوئے۔ میں سمجھتا ہوں یہ میری ذات کا مسئلہ نہیں، یہ ملک کا مسئلہ ہے، انڈیا نے ہمیشہ مجھ پر دہشت گردی کے الزامات لگائے اور دنیا کو باور کرانے کی کوشش کی، اس کیلئے لابنگ کی لیکن ہائیکورٹ کے فیصلے نے ثابت کیا ہے کہ سب پراپیگنڈا جھوٹ پر مبنی ہے اور اسلام دشمنی پر ان کی مدد کرنے والے لوگ اس کے ساتھ کھڑے ہوئے ہیں۔ میں اللہ کے فضل و کرم سے کشمیر کیس لڑ رہا ہوں اور انشاءاللہ ہمیں یہ لڑنا ہے۔ یہ 10 ماہ کی نظربندی اس وقت ہوئی جس ہم نے 2017ءکو کشمیر کے نام کیا تھا اور 5 فروری اور پورے ہفتے کیلئے بڑے پروگرام کا اعلان کیا تھا تو اس پر مجھے گرفتار کر لیا گیا۔ اس میں ایک ہی سبق تھا کہ میں کشمیر کیلئے بات نہ کر سکوں۔ اس کیلئے دباﺅ تھا اور انڈیا نے امریکہ کے ذریعے دباﺅ ڈلوایا تھا۔ بہرحال وہ وقت گزر گیا، اگرچہ اس سال کے صرف چند یوم باقی بچے ہیں لیکن ہماری جدوجہد جاری رہے گی اور اگلا سال اس سے بھی زیادہ بھرپور انداز میں کشمیر کے نام کر کے تحریک کو آگے بڑھائیں گے۔ امت کو بیدار کریں گے اور پورے پاکستان کو ساتھ ملائیں گے۔ اللہ اس میں خیر و برکت کرے اور اسے نتیجہ خیز بنائے۔
حافظ سعید/ رہا