.مسلم امہ نظریاتی اختلافات ختم کرکے دشمن کے عزائم ناکام بنادے :ترک صدر

24 نومبر 2017

انقرہ+استنبول (اے پی پی+اے ایف پی) ترکی کے صدر رجب طیّب اردگان نے اسلامی ممالک سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مسلم امہ کے درمیان نفاق کا بیج بونے والوں کے عزائم ناکام بنا دیں۔ ترک خبرساں ادارے کے مطابق ایک بیان میں انہوں نے کہا مغربی دنیا کی تاریخ میں جتنی بھی برائیاں تھیں وہ تمام ہم پر مسلط کرتے ہوئے اپنے مستقبل کو محفوظ کر رہے ہیں لہٰذا ہمیں چاہیے کہ اسلامی امہ، اتحاد و یکجہتی اور اپنی آئندہ کی نسلوں کو تباہی سے بچانے کیلئے ان گھناؤنے عزائم کو ناکام بنائیں۔ انہوں نے کہا کہ داعش، پی کے کے، القاعدہ، گولن تنظیم، بوکو حرام اور ان جیسی دہشت گرد تنظیموں نے دنیا کو خون میں نہلا دیا ہے اورجہاں تک شام کی صورتحال کا سوال ہے تو اس کیلئے تہذیب و انسانی اوصاف کے کھوکھلے دعوے کرنے والی مغربی دنیا ہمارے سامنے ہے۔ترک صدر نے دن میں 5 دفعہ ایک ہی قبلے کی سمت سربسجود ہونے والی مسلم امہ سے التجا کی کہ آپس میں مذہبی منافرت اور نظریاتی اختلافات کو چھوڑ کر رنجشوں کا خاتمہ کریں کیونکہ یہ تمام عوامل وہ ہیں جو کہ ہمارے دشمنوں کے ہاتھ مضبوط کر رہے ہیں اور ہمارے درمیان اپنے مفادات کی خاطر نفاق کی دیوار کھڑی کر رہے ہیں۔ترک صدر طیب اردگان آئندہ چند روز میں یونان کے دورے پر جائیں گے۔ کسی بھی ترکی کے سربراہ مملکت کا یہ 65 برس بعد پہلا دورہ ہوگا۔ اردگان نے بطور وزیراعظم 2004ء اور 2010ء میں یونان کا دورہ کیا تھا لیکن بطور صدر پہلا ہے۔ 1952ء میں سابق ترک صدر سیلال بائر یونان گئے تھے اس کے بعد کسی بھی ترک صدر نے دورہ نہیں کیا۔ ماضی میں دونوں ممالک کے تعلقات کشیدہ رہے ہیں۔ ڈپٹی وزیراعظم ہرکان نے دورے کے شیڈول کا اعلان نہیں کیا۔