یوم تکبیر

24 جون 2011
یوم تکبیر کا ہے یہ ہم سے سوال۔۔۔۔۔۔۔بن گئے ایٹمی کیا ہے اب اپنا حال
ہو رہا ہے یہ جو کچھ مرے ملک میں۔۔۔۔۔۔۔۔ ہے فقط چند کٹھ پتلیوں کا کمال
جنگ اوروں کی ہم لڑ رہے ہیں یہاں۔۔۔۔۔۔۔ ہر طرف سازشوں کا ہی پھیلا ہے جال
بھول بیٹھے ہیں اپنی روایات کو۔۔۔۔۔۔۔۔ مادیت پہ اب ہو رہا قیل و قال
اب تو ہم پر مسلط ہیں کوتاہ قد۔۔۔۔۔۔۔ کر دیا ہے کرپشن نے ہم کو نڈھال
ہے جو قلت صحیح رہبروں کی یہاں۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا اسی کو ہی کہتے ہیں قحط الرجال!
آﺅ واثق کریں مل کے جدوجہد۔۔۔۔۔۔۔۔ اور دنیا میں قائم کریں اک مثال
IORCکی تقریب” یوم تکبیر “میں پڑھی گئی۔
عبدالقیوم واثق....جدہ

آئین سے زیادتی

چلو ایک دن آئین سے سنگین زیادتی کے ملزم کو بھی چار بار نہیں تو ایک بار سزائے ...