انوشہ رحمان کے کالم پر مسلم لیگ ن‘ پی پی ارکان میں جھڑپ‘ ایوان بالا مچھلی منڈی بن گیا

24 جون 2011
اسلام آباد (وقائع نگار خصوصی) مسلم لیگ ( ن ) کی ایم این اے انوشہ رحمن کی جانب سے چیئرمین سینٹ کے خلاف لکھے گئے کالم کے معاملے پر پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ( ن ) کے ارکان میں جھڑپ ہوئی۔ حکمران جماعت کے سینیٹرز کے شور کے باعث ایوان مچھلی منڈی بنا رہا۔ پیپلز پارٹی کی سعیدہ اقبال اور کاظم خان نے احتجاجاً واک آوٹ کیا۔ سینیٹر اسحاق ڈار نے کہا کہ کالم سیاق و سباق سے ہٹ کر شائع کیا گیا‘ معاملہ استحقاق کمیٹی کے سپرد کر دیا گیا۔ ثالثی معاہدات بل اتفاق رائے سے منظور کر لیا گیا جبکہ بجلی بحران پر حکومتی و اپوزیشن سینیٹرز نے شدید احتجاج کیا اور وفاقی وزیر پانی و بجلی کو ایوان میں حاضر کرنے کا مطالبہ کیا۔ تفصیلات کے مطابق قائد اےوان نے انوشہ رحمن کے معاملے پر چےئر کی توہےن کئے جانے کی رولنگ دےنے کی سفارش کی جس کی اسحاق ڈار نے مخالفت کی۔ ڈپٹی چےئرمےن سےنٹ نے اپنے رےمارکس مےں کہا کہ ےہ چےئر نوڈےرو ےا رائے ونڈ کے تابع ہر گز نہےں اراکےن غےر پارلےمانی روےہ ترک کر دےں حکمران جماعت کے مطالبے پر ڈپٹی چےئرمےن سےنٹ نے مذکورہ معاملے کو سےنٹ کی مجلس قائمہ برائے استحقاق کے سپرد کر دےا۔ سینےٹر مشاہد اللہ خان نے کہا کہ اس معاملے کی تحقےق ہونا چاہئے لےکن اےوان کے دونوں جانب صبر و تحمل کے درس کی تبلےغ کی جائے۔ سینیٹر رضا ربانی نے کہا کہ صوبوں کو منتقل ہونے والی وزارتوں میں کسی ملازم کو برطرف کیا گیا نہ منتقل کیا جائے گا۔ جبکہ صدر پاکستان کے پارلیمنٹ اجلاس سے خطاب پر بحث پر اظہار خیال کرتے ہوئے سنیٹر اسماعیل بلیدی نے کہا کہ ملک میں اس وقت پالیسیوں کو تسلسل کے ساتھ چلانے کی ضرورت ہے ہر حکومت سابق حکومت کے جاری منصوبے بند کر دیتی ہے جس کے برے اثرات معیشت اور ملک پر پڑتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر اس ملک میں امن قائم کرنا ہے تو امریکی جارحیت روکنا ہو گی۔

آئین سے زیادتی

چلو ایک دن آئین سے سنگین زیادتی کے ملزم کو بھی چار بار نہیں تو ایک بار سزائے ...