A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined index: category_data

Filename: frontend_ver3/Templating_engine.php

Line Number: 35

قزاقوں سے رہائی پانیوالے 4 پاکستانیوں سمیت 22 افراد کراچی پہنچ گئے‘ جذباتی مناظر

24 جون 2011
کراچی (وقائع نگار + نامہ نگار + ریڈیو مانیٹرنگ + وقت نیوز + ایجنسیاں) صومالی قزاقوں کی قید سے 11ماہ بعد رہا ہو کر آنے والے 4 پاکستانیوں سمیت 22 افراد پی این ایس ذوالفقار کے ذریعے کراچی پہنچ گئے۔ اس موقع پر انتہائی جذباتی مناظر دیکھنے مےں آئے رہائی پانے والوں مےں 6 بھارتی، 11مصری اور ایک سری لنکن شامل ہےں۔ چاروں پاکستانی بحری جہاز سے باہر آتے ہی سجدہ ریز ہوگئے اور شکرانے کے نوافل ادا کئے۔ کیپٹن وصی نے اپنی بیٹی لیلیٰ کو گلے لگا لیا اور دونوں ایک دوسرے کو روتے ہوئے چومتے رہے۔ کراچی پورٹ پر گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد، سماجی کارکن انصار برنی، مغویوں کے اہلخانہ اور شہریوں کی بڑی تعداد نے رہا ہو کر آنے والوں کا شاندار استقبال کیا۔ رہائی کےلئے اقدامات نہ کرنے پر بھارتی شہری اپنی حکومت پر برس پڑے، بھارتی رکن وریندر نے کہا کہ پاکستان مدد نہ کرتا تو ہماری نعشیں بھی نہ ملتیں، رویندر کی اہلیہ سمپا آریا نے اپنے شوہر کی دیگر افراد کے ہمراہ رہائی پر پاکستانی حکومت اور عوام کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ ان کے دادا نے ایک بار بتایا تھا کہ سچے مسلمان کی دوستی سے بڑھ کر کوئی تحفہ نہیں اور آج یہ بات حرف بہ حرف ثابت ہوگئی۔ کیا بھارتی وزیراعظم منموہن سنگھ کے اپنے بچے ہوتے تو وہ کچھ نہ کرتے۔ اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیپٹن وصی نے کہا کہ یقین نہیں آتا کہ زندہ ہوں زندگی سے مایوس ہوگیا تھا کیپٹن وصی کی بیٹی لیلیٰ کا کہنا تھا کہ ان سے کیا گیا وعدہ پورا کیا گیا۔ اس موقع پر پاک بحریہ کے بینڈ نے خیرمقدمی دھنیں بجائیں۔ صومالی قزاقوں نے 2 اگست 2010ءکو ایم وی سوئز کے عملے کو یرغمال بنا لیا تھا۔ قزاقوں کو 21 لاکھ ڈالر تاوان کی ادائیگی کی گئی۔ گورنر ڈاکٹر عشرت العباد خان نے کہاکہ یرغمالی عملے کی رہائی سے پوری قوم کا سر فخر سے بلند ہو گیا ہے۔ بعدازاں رہائی پانے والے افراد کو گورنر ہاﺅس میں استقبالیہ بھی دیا گیا۔ گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد نے اس امید کا اظہار کیا کہ بھارت سے بھی محبت کا پیغام آئے گا انہوں نے کہاکہ مغویوں کی رہائی کےلئے میڈیا اور قوم نے بھرپور ساتھ دیا جبکہ انصار برنی ایڈووکیٹ نے انتھک کوششیں کیں۔ صومالی قزاقوں کی قید سے رہا ہونے والے جہاز ایم وی سوئز کے پاکستانی کپتان کیپٹن وصی نے کہاکہ قوم متحد ہو جائے تو مجھے سچی خوشی نصیب ہو گی۔ میری بیٹی لیلیٰ اور قوم کی دعاﺅں نے ہمیں بچایا ہے۔ گورنر سندھ‘ نیول چیف کے شکر گزار ہیں۔ اس موقع پر کیپٹن وصی کی اہلیہ جذبات سے مغلوب نظر آتی تھیں۔ گورنر ہاﺅس کے باہر سینکڑوں نوجوان ایم کیو ایم کے پرچم لئے ریلیوں کی شکل میں موٹر سائیکلوں‘ کاروں اور دیگر گاڑیوں میں اکٹھا ہو گئے۔ ایم وی سوئز کے کیپٹن وصی اور ان کی معصوم بیٹی لیلیٰ کو گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد کے ساتھ ان کی گاڑی میں اگلی سیٹ پر بٹھایا گیا جبکہ گورنر سندھ نے خود گاڑی ڈرائیو کی۔ صومالی قزاقوں سے رہائی پانے والے بھارتی باشندوں کے رشتہ دار ان کے استقبال کےلئے پاکستان نہ آ سکے۔ بھارتی رکن وریندر سے پوچھا گیا کہ بھارتی حکومت نے 11ماہ تک قید بھارتیوں کے مصائب پر کوئی توجہ نہ دی، اس پر وریندر کی آنکھوں سے آنسو نکل پڑے اس نے کہا کہ ہم تصور نہیں کر سکتے تھے کہ پاکستان ہمارے لئے اتنا اچھا کرے گا۔ مےں پاکستانیوں کو سلیوٹ کرتا ہوں۔ قزاقوں کی قید سے رہا ہونے والے مصری، بھارتی اور سری لنکن جمعہ کو اپنے اپنے ممالک کو روانہ ہو جائیں گے۔ این این آئی کے مطابق بھارتی مغوی ایم کے شرما کی بیوی مدھوشرما بھی حکومت پر برس پڑیں اور بھارتی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی حکومت ایم وی سوئز کے مغویوں کےلئے کچھ بھی نہ کر سکی۔ علاوہ ازیں متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین نے پاکستان واپس پہنچنے پر ایم وی سوئز جہاز کے عملے کے ارکان اور ان کے اہلخانہ کو مبارکباد دی ہے اور کہا ہے کہ ایم کیو ایم نفرت پر نہیں بلکہ انسانیت پر یقین رکھتی ہے۔ بھارتی باشندے وریندر کی اہلیہ سمپاآریا نے مزید کہا کہ جب مےں چھوٹی تھی تو ہمارے دادا آزادی کی کہانیاں سنایا کرتے تھے اس مےں وہ اکثر کہا کرتے تھے کہ بیٹا ایک سچے مسلمان کی دوستی سے بڑھ کر کوئی تحفہ نہیں ہوتا۔ کئی بار ایسا ہوتا ہے کہ کوئی جملہ یا کچھ الفاظ انسان کے دماغ مےں گھر لیتے ہےں میرے من مےں یہ الفاظ سچا مسلمان دوستی اور تحفہ کے الفاظ ٹھہرے ہوئے تھے اور یقین کریں کہ مےں ان الفاظ کی اور بھی زیادہ قدر کرتی ہوں اور جان چکی ہوں کہ میرے دادا جی بالکل ٹھیک کہتے تھے سمپا آریا نے ایک سوال پر کہا کہ سیاست کے داﺅ پیچ لڑانے والوں نے دونوں ملکوں کے عوام کو ایک دوسرے سے الگ کر دیا ہے۔