لوٹ مارکی تاریخ

24 جون 2011
مکرمی! ایک سابق وفاقی وزیر نے پھر وفاقی وزیر بنتے ہی دونوں ہاتھوں سے لوٹنا شروع کردیا ہے۔ پوسٹنگ/ ٹرانسفر فی آفیسر لاکھوں روپے تک وصول کیے گئے ہیں۔اپنے دفتر کی خصوصی مرمت بغیر ٹینڈر اپنی دوست کو ایک کروڑ سے زائد کا ٹھیکہ دیدیا گیا ۔اپنی ذاتی اور اپنے بہنوئی کی کوٹھی واقع کراچی کی خصوصی مرمت پی ڈبلیو ڈی کے افسران کر رہے ہیں اور موصوف کے اپنے گاﺅں میں پی ڈبلیو ڈی کے افسران فارم ہاﺅس تعمیر کر رہے ہیں۔ واضح رہے1988ءمیں موصوف جب ممبر قومی اسمبلی بنے تو انہیں پیپلز ورکس پروگرام کا سربراہ مقرر کیا گیا تھا۔انہوں نے اپنے دست راست شہری کو ڈائریکٹر جنرل کنٹریکٹ پر مقرر کروایا اور خوب مال کمایا۔ حکومت ٹوٹنے کے بعد سارا ریکارڈ نظر آتش کردیا گیا اور موصوف غیر ملک کو فرار ہوگیا۔ اب تاریخ اپنے آپ کو دہرا رہی ہے۔جناب صدر مملکت پاکستان، جناب وزیراعظم پاکستان، جناب چیف جسٹس آف سپریم کورٹ ،چیف آف آرمی سٹاف جناب اشفاق پرویز کیانی اور چیئر مین نیب کب نوٹس لیں گے۔؟؟؟
(مخلوق آل غریب عوام پاکستان)