افغانستان : حزب اسلامی کے حملے میں 5 فرانسیسی فوجی ہلاک

24 دسمبر 2009
کابل، نیویارک (اے ایف پی، جی این آئی) افغانستان کے صوبے کاپیسا میں حزب اسلامی نے پانچ فرانسیسی فوجیوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا۔ حزب اسلامی کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا کہ ان کے مجاہدین نے ضلع تگاب کے علاقے عمرخیل میں فرانسیسی فوجیوں کے قافلے پر ہلکے اور بھاری ہتھیاروں سے حملہ کیا۔ ترجمان کے مطابق جھڑپ میں پانچ فرانسیسی فوجی مارے گئے جبکہ حزب اسلامی کا مجاہد بھی زخمی ہوا۔ ادھر چیک پوائنٹ کو توڑنے پر پولیس کی فائرنگ سے سینیٹر بیٹے سمیت ہلاک ہو گیا۔ حکام کے مطابق صوبہ بغلان میں سینیٹر شرائن آغا بیٹے کے ہمراہ علاقے سے گزر رہے تھے جہاں افغان فورسز طالبان کیخلاف کارروائی کر رہی ہیں۔ پولیس نے انہیں روکا لیکن شاید ان کا ڈرائیور دیکھ نہ پایا جس پر پولیس نے فائرنگ کر دی۔ ہلمند میں بم دھماکے سے ایک برطانوی ہلاک ہو گیا ہے۔ امریکی خبررساں ادارے نے دعویٰ کیا ہے کہ کالعدم تحریک طالبان کے کمانڈر ولی الرحمن نے کہا ہے کہ افغانستان میں امریکی اور اتحادی فوجیوں کیخلاف لڑنے کیلئے ہزاروں طالبان افغانستان روانہ کر دئیے ہیں۔ پاکستانی علاقے شاہ کوٹ میں طالبان کمانڈر ولی الرحمن نے خصوصی انٹرویو میں کہا کہ صدر اوباما اور نیٹو ہزاروں اضافی فوجی افغانستان بھیج رہے ہیں۔ ایسی صورت میں افغان طالبان کو انکی مدد کی ضرورت ہے جس کی وجہ سے ہزاروں طالبان افغانستان روانہ کر چکے ہیں۔ ولی الرحمن کا کہنا تھا کہ پاکستان امریکہ کے ساتھ تعلقات میں لچک ختم کرے تو طالبان پاکستان کا ہر طرح سے ساتھ دیں گے۔