آرمی چیف کی پہلے صدر پھر وزیراعظم سے ملاقات : چیلنجوں کا ڈٹ کر سامنا کریں گے‘ زرداری

24 دسمبر 2009
اسلام آباد (خصوصی نامہ نگار/ ریڈیو نیوز/ ایجنسیاں) آرمی چیف جنرل اشفاق پرویز کیانی نے ایوان صدر میں صدر زرداری سے تفصیلی ملاقات کے فوراً بعد وزیراعظم ہاﺅس میں وزیراعظم گیلانی سے ملاقات کی۔ ذرائع کے مطابق ملاقات میں این آر او پر فیصلے کے بعد کی صورتحال اور دفاعی امور پر تبادلہ خیال کیا اور آرمی چیف نے وزیرستان آپریشن پر بریفنگ دی۔ آرمی چیف سے ملاقات کے دوران صدر زرداری نے کہاکہ پوری قوم فوج کے شانہ بشانہ کھڑی ہے‘ شدت پسندوں کو ہر صورت شکست دینگے‘ پیپلزپارٹی کو عوام نے اقتدار سونپا ہے‘ جمہوری طور پر منتخب حکومت تمام چیلنجوں کا ڈٹ کر سامنا کرے گی۔ فاٹا سے تعلق رکھنے والے ارکان قومی اسمبلی اور سینیٹرز نے بھی صدر زرداری سے ملاقات کی۔ ایوان صدر کے ذرائع کے مطابق فاٹا کے ارکان پارلیمنٹ نے منتخب صدر کیساتھ اظہار یکجہتی کیا اور کہاکہ فاٹا کے ارکان جمہوریت کے استحکام کیلئے بھرپور تعاون کرینگے۔ جی این آئی کے مطابق اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے فاٹا سے تعلق رکھنے والے ارکان نے اس موقع پر صدر زرداری کی قیادت پر مکمل اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے انہیں مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی اور اس عزم کا اعادہ کیا کہ جمہوری حکومت کے خلاف سازشوں کے قلع قمع اور دہشت گردی کے خلاف جنگ کو منطقی انجام تک پہنچانے کیلئے ہرمکن کوشش کی جائے گی۔ منیر خان اورکزئی نے کہاکہ صدر زرداری آئین کے مطابق منتخب ہوئے اور صدر یا سسٹم کے خلاف سازشوں کی اجازت نہیں دی جائیگی۔ صدر مملکت نے ارکان فاٹا کے جذبات کی تعریف کرتے ہوئے کہاکہ پیپلزپارٹی کو عوام کی طاقت حاصل ہے اور عوام کی خدمت کیلئے ہرممکن کوشش کی جائیگی۔ ریڈیو نیوز کے مطابق آرمی چیف سے ملاقات کے دوران صدر زرداری نے کہاکہ مٹھی بھر انتہا پسند 17کروڑ عوام کو یرغمال نہیں بنا سکتے‘ دہشت گردوں کے خلاف جنگ کو انجام تک پہنچائیں گے‘ پاک فوج کے آپریشن سے دہشت گردوں کا نیٹ ورک ٹوٹ چکا ہے‘ دہشت گردوں کے اہم رہنما مارے جا چکے ہیں جبکہ بچ جانے والے دہشت گرد فرار ہو رہے ہیں۔ جنرل کیانی نے دہشت گردی کے خلاف جاری فوجی آپریشن کی تفصیلات سے صدر کو آگاہ کیا۔ ملاقات میں وزیرستان آپریشن اور متاثرین کی بحالی کے معاملے پر تفصیلی تبادلہ خیال میں عزم ظاہر کیا گیا کہ دہشت گردوں کے خاتمہ تک ان کا پیچھا کیا جائے گا اس کے علاوہ ملکی دفاعی امور‘ امریکہ کی نئی افغان پالیسی‘ فوج کے پیشہ وارانہ امور‘ دہشت گردی کے خلاف جنگ‘ خطے کی سکیورٹی کی صورتحال پر بھی گفتگو کی گئی۔

روحانی شادی....

شادی کام ہی روحانی ہے لیکن چھپن چھپائی نے اسے بدنامی بنا دیا ہے۔ مرد جب چاہے ...