لاہور :کنیئرڈ کالج میں گاندھی کو آئیڈیل قرار دینے کے ایشو پر اعترا ض کرنے والی 5 لیڈی ٹیچرز فارغ

24 دسمبر 2009
لاہور ( لیڈی رپورٹر) پنجاب میں خواتین کی تعلیمی قابلیت کے حوالے سے منفرد مقام حاصل کنیرڈ کالج برائے خواتین لاہور کی پرنسپل کے ریمارکس نے ہنگامہ برپا کر دیا۔ پرنسپل ڈاکٹر برینڈ ڈین کی جانب سے قائداعظمؒ کو آئیڈل شخصیت قرار دینے کی بجائے گاندھی کو آئیڈیل قرار دینے کے بعد اس ایشو پر اعتراض کی پاداش میں 5 اساتذہ کو ملازمت سے فارغ کر دیا۔ فارغ ہونے والی خواتین اساتذہ میں عاصمہ جمیل، زرینہ رضوی، شیبا سید، سائرہ ملک اور صدف منیر شامل ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ان اساتذہ کو پرنسپل کی جانب سے قائداعظم کی بجائے گاندھی کو آئیڈل قرار دینے اور رجسٹرار ڈاکٹر ناعمہ خورشید کی تعیناتی پر اعتراض کرنے کی پاداش میں فارغ کیا گیا کالج پرنسپل ڈاکٹر برینٹ ڈین نے کہا کہ گاندھی کو آئیڈیل قرار دینے سے میرا کوئی غلط مقصد نہیں تھا۔ میں نے تو ایک انٹرویو میں انسانی حقوق اور آزادی کیلئے جدوجہد کرنےوالے یسوع مسیح، نیلسن منڈیلا اور گاندھی کو آئیڈیل قرار دیا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان اساتذہ کو کنٹریکٹ ختم ہونے پر فارغ کیا گیا جبکہ ٹرانسفر ہونے والی کواتین اساتذہ کو سرپلس پول میں بھیجا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ رجسٹرار کی تعیناتی بورڈ آف گورنرز کے فیصلے بعد عمل میں آئی ۔