صدر زرداری نے جو زبان استعمال کی وہ نہایت شرمناک ہے: مسلم لیگ ن

23 جون 2011
اسلام آباد + لاہور (وقت نیوز + مانیٹرنگ ڈیسک + آن لائن) مسلم لیگ ( ن ) کے رہنماﺅں نے صدر آصف علی زرداری کے حالیہ بیان پر اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملکی سیاست میں جو زبان استعمال کی گئی وہ نہایت ہی شرمناک ہے ایسا لگا کہ صدر یوم نواز شریف سے خطاب کر رہے تھے ہم سیاست میں شائستگی کو برقرار رکھنا چاہتے ہیں‘ عوام زرداری کی تقریر سے متاثر نہیں ہونگے زرداری مسلم لیگ کے قائد پر ذاتی حملے کر کے عوامی توجہ حاصل کرنا چاہتے ہیں۔ نجی ٹی وی سے گفتگو میں سنیٹر پرویز رشید نے کہا کہ نوڈیرو میں سابق وزیراعظم محترمہ بے نظیر بھٹو کی سالگرہ تھی لیکن ایسا لگ رہا تھا کہ صدر آصف زرداری سالگرہ کی تقریب سے نہیں بلکہ یوم نواز شریف سے خطاب کر رہے ہوں۔ نوازشریف نے پارٹی رہنماﺅں کو ہدایت کی ہے کہ ہم ان کی باتوں کا جواب نہیں دینگے۔ صدر نے میڈیا کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا انہوں نے سیاست میں فوج کو گھسیٹا سیاست میں فوج کو گھسیٹ کر روایتی سیاست چمکانے کیلئے فوج کو کسی دوسری سیاسی قوت کے آمنے سامنے کھڑا کرنا کوئی اچھی بات نہیں۔ پنجاب کے وزیر قانون رانا ثناءاللہ نے کہا ہے کہ صدر زرداری لادینی قوتوں اور ایجنسیوں کی مدد سے میدان میں آگئے ہیں۔ زرداری نے ایجنسیوں کی مدد سے جیل سے رہائی حاصل کی۔ آئندہ انتخابات میں ایجنسیوں کے مہروں اور عوامی سوچ رکھنے والی جماعتوں کے درمیان مقابلہ ہو گا۔ صدر زرداری نے بے نظیر بھٹو کی سالگرہ پر بطور صدر نہیں کرپٹ جیالے کی حیثیت سے تقریر کی۔ بے نظیر بھٹو کے قتل کی صحیح معنوں میں تفتیش کی جائے تو معلوم ہو گا کہ اصل قاتل کون ہیں؟ جو جتنا کرپٹ ہوتا ہے اتنا زرداری صاحب کے قریب ہوتا ہے۔ صوبائی وزیر خزانہ و اقلیتی امور کامران مائیکل نے کہا ہے کہ صدر آصف علی زرداری نے نوازشریف کی ذات کے حوالے سے انتہائی نازیبا اور گھٹیا الفاظ ادا کر کے یہ ثابت کیا ہے کہ وہ ایوان صدارت کے منصب کے لائق نہیں‘ زبان درازی‘ گھٹیا غیر اخلاقی اور غیر جمہوری روایات کی عکاسی ہے‘ لگتا ہے زرداری کے جسم میں مشرف کی روح گھس آئی ہے۔ مسلم لیگ ( ن ) یوتھ ونگ کے مرکزی آرگنائزر و رکن قومی اسمبلی کیپٹن (ر) محمد صفدر نے کہا کہ صدر زرداری نے نوازشریف کے خلاف نازیبا الفاظ پر مشتمل تقریر کر کے پارٹی کارکنوں کی ہمدردیاں سمیٹنے کی ناکام کوشش کی‘ شاہ محمود قریشی‘ ناہید خان اور صفدر عباسی کی قیادت میں کامیابی سے بی بی کی سالگرہ تقریب کا انعقاد کر کے پیپلز پارٹی کے اغوا کار زرداری کے خلاف خطرے کی گھنٹی بجا دی ہے۔ زرداری پارٹی پر گرفت کھو چکے ہیں‘ لسانی منافرت پر مبنی تقریر کی گئی۔ مسلم لیگ ( ن ) کے ترجمان احسن اقبال نے کہا کہ آصف زرداری بےنظیر بھٹو کے قاتلوں کو بے نقاب کرنے کے اہم سوال کا جواب نہیں دے سکے۔ آصف زرداری نے نوازشریف کے خلاف وہی زبان استعمال کی جو مشرف کرتے تھے۔ زرداری جیل میں رہے تو اس کی وجہ سیاسی نہیں بلکہ کرپشن کے مقدمات تھے۔ سوئس بنکوں میں رکھی گئی لوٹی ہوئی رقم کی تحقیقات کی جائیں تو زرداری کو پھر جیل جانا پڑ سکتا ہے۔