رانا ثناءاللہ کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج کرا سکتا تھا مگر مفاہمتی راہ اختیار کی: گورنر

23 جون 2011
سرگودھا (نمائندگان) گورنر پنجاب سردار لطیف کھوسہ نے کہا ہے کہ بابر اعوان کو واجب القتل قرار دینے پر صوبائی وزیر قانون رانا ثناءاللہ پر دہشت گردی کا مقدمہ درج کروا سکتا ہوں، سلمان تاثیر کے قتل سے قبل بھی ایسی باتیں کی جا رہی تھیں، میثاق جمہوریت اور مفاہمتی پالیسی کو مدنظر رکھتے ہوئے جمہوریت کو فروغ دے رہے ہیں نفرت کی سیاست کے خاتمے سے ہی دہشت گردی پر قابو پایا جا سکتا ہے آئیں سب مل کر ملک و قوم کی خدمت کریں۔ ان خیالات کا اظہار گورنر پنجاب سردار لطیف خان کھوسہ نے یونیورسٹی آف سرگودھا اور پاکستان پیپلز پارٹی کے ڈویژنل کوآرڈینیٹر ملک عزیز الحق کی رہائش گاہ پر تقریبات سے خطاب کرتے ہوئے کیا اور کہا کہ موجودہ حکومت نفرت کی سیاست ختم کر کے مل جل کر پاکستانی عوام کی خدمت کا مشن لے کر آگے بڑھ رہی ہے‘ این ایف سی ایواڈ، 18ویں اور 19ویں ترامیم کی منظوری، صوبوں کو وزارتوں کی منتقلی موجودہ حکومت کا کارنامہ ہے، وزیر اعلیٰ پنجاب جو اس وقت شور مچا رہے ہیں شاید بھول چکے ہیں کہ اب سب کچھ صوبوں کو منتقل ہو چکا ہے، حالیہ وفاقی بجٹ 730 ارب روپے کا ہے جس میں سے 430 ارب روپے صوبو ں کو دیئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بےنظیر بھٹو نے تو ملکی استحکام اور جمہوریت کی بحالی کے لئے میثاق جمہوریت پر ایسے شخص کے ساتھ دستخط کئے جس نے ان کے شوہر کو 11 سال تک جیل میں رکھا۔

EXIT کی تلاش

خدا کو جان دینی ہے۔ جھوٹ لکھنے سے خوف آتا ہے۔ برملا یہ اعتراف کرنے میں لہٰذا ...