کراچی: سرفراز قتل کیس کے ملزم رینجرز اہلکاروں پر آج فرد جرم عائد کی جائے گی

23 جون 2011
کراچی (مانیٹرنگ نیوز) انسداد دہشت گردی کی عدالت نے سرفراز شاہ قتل کیس کے تمام ملزمان کو گواہوں کے بیانات کی نقول فراہم کر دی ہیں، ان پر آج فرد جرم عائد کی جائے گی۔ رینجرز کے سب انسپکٹر بہاءالرحمان، لانس نائیک لیاقت علی، سپاہی محمد افضل، محمد طارق ، شاہد ظفر اور پرائیویٹ شخص افسر خان پر 8 جون کو کلفٹن میں واقع بے نظیر شہید پارک میں نوجوان سرفراز شاہ کو سرعام گولیاں مار کر قتل کرنے کا الزام ہے۔ گولی چلانے والے ملزم طارق علی کی طرف سے سابق سرکاری وکیل نعمت علی رندھاوا پیش ہوئے۔ باقی ملزمان نے جج بشیر احمد کھوسو سے درخواست کی کہ انہیں وکیل کرنے کیلئے دو تین دن کا وقت دیا جائے لیکن عدالت نے ریمارکس دیئے کہ سپریم کورٹ کی ہدایت کی موجودگی میں سماعت ایک روز سے زیادہ ملتوی نہیں جا سکتی۔ محکمہ داخلہ سندھ نے تحقیقاتی ٹیم کو رپورٹ جمع کرانے کیلئے مزید 7 دن کی مہلت دے دی۔ اس سے پہلے تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ اور ڈی آئی جی ویسٹ سلطان خواجہ کی درخواست پر محکمہ داخلہ سندھ نے تحقیقاتی رپورٹ 20 جون کو طلب کی تھی۔