”ق لیگ کی حکومت میں شمولیت“ ماروی میمن احتجاجاً قومی اسمبلی اور پارٹی رکنیت سے مستعفی

23 جون 2011
اسلام آباد (نمائندہ خصوصی) پاکستان مسلم لیگ ق کی رکن ماروی میمن نے قومی اسمبلی اور اپنی جماعت کی رکنیت سے استعفیٰ دیدیا ہے۔ ماروی میمن نے اپنے استعفے کا اعلان قومی اسمبلی کے اندر کیا اور تحریری استعفیٰ کی عبارت کو ایوان کے اندر پڑھ کر سنایا اور بعدازاں سپیکر قومی اسمبلی ڈاکٹر فہمیدہ مرزا کے حوالے کرنے کے بعد ایوان سے چلی گئی۔ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے ارکان نے ماروی میمن کے استعفیٰ کا خیرمقدم کیا جبکہ پاکستان پیپلزپارٹی کے چیف وہپ سید خورشید شاہ سے پاکستان مسلم لیگ ق کے ڈپٹی پارلیمانی لیڈر سید فیصل صالح حیات نے استعفیٰ پر نکتہ چینی کی۔ گذشتہ روز قومی اسمبلی میں فنانس بل کی منظوری دئیے جانے کے بعد ماروی میمن نے سپیکر قومی اسمبلی سے پوائنٹ آف آرڈر پر بات کرنے کی اجازت چاہی۔ انہوں نے اجازت ملنے کے بعد چند صفحات پر مشتمل اپنے استعفیٰ کی عبارت کو پڑھنا شروع کیا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ انہوں نے بجٹ کی مخالفت کی ہے۔ وہ قومی اسمبلی کے رکن کی حیثیت سے مارچ 2008ءسے کام کر رہی ہیں اور اپنے فرائض دیانتداری سے انجام دئیے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ان کی پارٹی کی قیادت نے اتحادی حکومت میں شامل ہو کر عوامی امنگوں کی نفی کی ہے، غریبوں سے کھانے اور جینے کا حق چھین لیا گیا ہے، پاکستان مسلم لیگ ق نے حکومت کا ساتھ دیا ہے جو بنیادی ذمہ داریاں ادا کرنے میں ناکام رہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ وہ اپنے ضمیر کے خلاف نہیں جا سکتی ہیں۔ حکومت ایبٹ آباد کے واقعہ کے بارے میں مشترکہ قرارداد پر عمل کرنے میں ناکام رہی ہے اسی طرح متعدد دوسرے ایشوز پر بھی حکومت کی کارکردگی غیرموثر ہے۔ امن و امان کے مسائل میں لوگ اغوا کے بعد قتل ہو رہے ہیں، ماروی میمن نے استعفے کی تحریر پڑھنے کے بعد سیدھی سپیکر قومی اسمبلی کی نشست کی جانب گئیں اور استعفیٰ سپیکر قومی اسمبلی کے حوالے کر دیا۔ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے ارکان نے زور دار ڈیسک بجاکر استعفیٰ کا خیرمقدم کیا۔ دوسری طرف قومی اسمبلی کے ترجمان کے مطابق ماروی میمن کا استعفیٰ سیکرٹری قومی اسمبلی کو موصول ہوگیا ہے آج سپیکر ڈاکٹر فہمیدہ مرزا کو بھیجا جائے گا۔

نفس کا امتحان

جنسی طور پر ہراساں کرنے کے خلاف خواتین کی مہم ’می ٹو‘ کا آغاز اکتوبر دو ...