پاکستانی نوجوان دنیا بھر میں اپنی صلاحیتوں اور قابلیتوں کا لوہا منوا رہے ہیں : ڈاکٹر رفیق احمد

23 جولائی 2009
لاہور (خصوصی رپورٹر) نظریۂ پاکستان ٹرسٹ کے وائس چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر رفیق احمد نے کہا ہے کہ پاکستانی جوانوں میں ایسی بہت صلاحیتیں پائی جاتی ہیں کہ وہ ستاروں پر کمندیں ڈال سکتے ہیں۔ وہ امریکی ریاست انڈیانا سے ٹیلی فون پر نظریۂ پاکستان ٹرسٹ کے زیراہتمام ایوان کارکنان تحریک پاکستان شاہراہ قائداعظمؒ لاہور میں نظریاتی سمر سکول کے طلبہ سے خطاب کررہے تھے۔ اس موقع پرکرنل (ر) جمشید احمد ترین‘ پروفیسر ڈاکٹر سرفراز حسین مرزا‘ علامہ پروفیسر محمد مظفر مرزا بھی موجود تھے۔ پروفیسر ڈاکٹر رفیق احمد نے کہا کہ دنیا کے کسی بھی شعبے کو لیا جائے پاکستانیوں نے وہاں کامیابیوں اور کامرانیوں کے جھنڈے گاڑے ہیں۔ معمولی چیز سے لے کر ایٹم بم تک پاکستانیوں نے دنیا بھر میں اپنی صلاحیتوں اور قابلیتوں کا لوہا منوایا ہے۔ اس وقت سب سے مشکل ترین کامیابی ایٹمی طاقت کا حصول ہے لیکن یہ پاکستانی ہیں جنہوں نے عالمی طاقتوں کے شدید دبائو اور غربت کے باوجود وطن عزیز کو دنیا کی ساتویں ایٹمی طاقت بنا دیا۔ انہوں نے کہا کہ قائداعظمؒ‘ علامہ اقبالؒ اور تحریک آزادی کی دیگر عظیم شخصیات کا تعلق پاکستان کی اسی سرزمین سے تھا۔ انہوں نے کہا کہ کرکٹ کے میدان میں عمران خان‘ وسیم اکرم‘ کامران اکمل‘ شاہد آفریدی‘ محمد یوسف اور دیگر کھلاڑیوں نے کارہائے نمایاں سرانجام دیئے۔ سکوائش کے میدان میں جان شیر خان اور جہانگیر خان عرصہ دراز تک بے تاج بادشاہ رہے ۔ پاک فوج کے ایسے جوانوں کی تعداد بہت زیادہ ہے جنہوں نے اپنی جانوں کا نذرانہ دے کر تاریخ کا رخ موڑ دیا۔ ایم ایم عالم نے چند سیکنڈ میں دشمن کے نصف درجن طیارے تباہ کردیئے۔ عدلیہ کی تاریخ میں افتخار محمد چودھری اور دیگر وکلاء نے نئی تاریخ رقم کی۔ انہوں نے کہا کہ یہ سب وہ لوگ تھے جنہوں نے دن رات محنت کی اور کم وسائل ہونے کے باوجود ستاروں پر کمندیں ڈالیں اور وطن عزیز کا نام روشن کیا۔ انہوں نے کہا کہ ان لوگوں سمیت جس نے بھی اعلیٰ کامیابیاں حاصل کیں اس میں چار بنیادی چیزیں شامل ہیں۔ اسلام پر مضبوطی سے عمل‘ مضبوط سیرت کردار‘ پاکستانی ہونے پر فخر اور شاہین کی طرح محنت کش۔ انہوں نے کہا کہ اسلام کے تمام ارکان پر عمل اللہ تعالیٰ سے ہمارے تعلق کو مضبوط بناتا ہے۔ پاکستانی ہونے پر اس لیے فخر کرنا چاہیے کہ اللہ تعالیٰ نے ہمیں ہر قسم کی نعمتوں سے سرفراز فرمایا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ کے نظام تعلیم میں خوبیاں کم اور خامیاں زیادہ ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ بارک حسین اوباما نے اس نظام تعلیم پر سخت نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی بچے ذہانت و قابلیت میں ایشیائی اور خاص طور پر پاکستانی بچوں کا مقابلہ نہیں کرسکتے اور وہ تعلیم پر توجہ دینے کے بجائے زیادہ وقت ٹی وی اور کمپیوٹر پر صرف کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ امریکی نظام تعلیم کی ایک اہم خصوصیت یہ ہے کہ اس میں وطن سے محبت کا درس دیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ میں مسلمانوں کی تعداد 70 لاکھ سے زائد ہے اور یہاں پر تقریباً اڑھائی سو مسلم سکول بھی ہیں۔ اس موقع پر ڈاکٹر رفیق احمد کی ہونہار پوتی مصباح فواد احمد نے بھی نظریاتی سمرسکول کے بچوں سے خطاب کیا۔ اس موقع پر عدیل اشرف‘ محمد غضنفر عبداللہ‘ حفضہ شاہد‘ محمد حسنین مجاہد‘ ذوالفقار اور مہک صابر نے ڈاکٹر رفیق سے سوالات کیے جن کے انہو ںنے جوابات دیئے۔