ترا اندیشہ اَفلاکی نہیں ہے

23 جنوری 2015

ترا اندیشہ اَفلاکی نہیں ہے
تری پرواز لَولاکی نہیں ہے
یہ مانا اصل شاہینی ہے تیری
تری آنکھوں میں بے باکی نہیں ہے
(بالِ جبریل)