ڈومیسٹک کرکٹ میں بار بار تبدیلی نقصان دہ ہے معیار گر گیا: سابق چیف سلیکٹر ٹیسٹ کرکٹرز

23 دسمبر 2014

لاہور (نمائندہ سپورٹس) ڈومیسٹک کرکٹ کے فارمیٹ میں بار بار تبدیلی نقصان دہ ہے۔ ان خیالات کا اظہار سابق چیف سلیکٹر عبدالقادر نے نوائے وقت کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ بورڈ کے ساتھ منسلک سابق ٹیسٹ کرکٹرز میں بھی اتنی اہلیت اور سوچ میں اتنی وسعت نہیںکہ وہ کوئی اچھا کام کر سکیں۔ آئی سی سی میں نان کرکٹرز کھیل کا بیڑہ غرق کر رہے ہیں۔ ٹیسٹ کرکٹر عبدالرؤف نے کہا کہ نئے نظام سے کرکٹ کا معیار گرا۔ ریجنز کی سلیکشن میں سفارش کا کلچر عام ہے۔ نیا فارمیٹ اچھا تجربہ نہیں تھا۔ نیشنل بنک ٹیم کے منیجر ڈاکٹر جمیل نے کہا کہ ریجنز کی ٹیموں نے ڈیپارٹمنٹ کی ٹیموں کے خلاف بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ ٹیسٹ کرکٹر محمد خلیل نے کہا کہ محکموں اور علاقائی ٹیموں کی کرکٹ الگ الگ ہی ہونی چاہئے۔ موجودہ نظام سے کھیل کے معیار میں بہتری نہیں آئے گی۔ قائداعظم ٹرافی میں گیندیں بھی غیر معیاری استعمال کی گئیں۔