پاکستان حالت جنگ میں ہے، متحد ہوکر دشمنوں کا مقابلہ کرینگے: صدر ممنون

23 دسمبر 2014

اسلام آباد (آئی این پی) صدر مملکت ممنون حسین نے کہا ہے کہ دہشتگردی کے واقعات پاکستان کی ترقی کی راہ میں رکاوٹیں ڈالنے والی سازشوں کا حصہ ہیں، پشاور سانحہ کے بعد قومی قیادت کی جانب سے سیاسی پختگی کا مظاہرہ حوصلہ افزاء اقدام ہے، پاکستان حالت جنگ میں ہے۔ ہم ایک ایسے دشمن سے لڑ رہے ہیں جو ہمیں کمزور اور معاشرے میں افراتفری پھیلانا چاہتا ہے، دشمنوں کو کبھی بھی ذات، رنگ یا عقیدہ کے اختلافات کا استحصال نہیں کرنے دیں گے۔ ہمیں عہد کرنا ہوگا کہ ہمارا تعلق کسی بھی مذہب یا عقیدے سے ہو، ہمیشہ قومی اہمیت کے معاملات پر متحد اور ایک قوم کے طور پر باہمی دشمن کا سامنا کریں گے۔ وہ پیر کی شام ایوان صدر میں منعقدہ کرسمس کی تقریب سے خطاب کررہے تھے ۔ اس موقع پر صدر مملکت نے کہا کہ یہ تقریب ایسے موقع پر منائی جارہی ہے جب پوری پاکستانی قوم نے حال ہی میں ایک بہت بڑا سانحہ جھیلا ہے۔ دشمنوں نے ہمیشہ باہمی اختلافات سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کی اور ایک دوسرے کے خلاف کھڑا کرنے کا کوئی موقع نہیں چھوڑا۔ صدر مملکت نے کہا کہ پشاور المیہ ہمارے لیے یاد دہانی ہے کہ تمام عسکریت پسندوں اور انتہا پسندوں سے ہمیں خطرہ درپیش ہے۔ حکومت مختلف عقائد کے پیروکاروں کی سماجی اور اقتصادی ترقی کیلئے ہر ممکن اقدامات کرنے لیے پرعزم ہے۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وفاقی وزیر مذہبی امور سردار محمد یوسف نے کہا کہ سارا ملک اس وقت شدید غم اور سوگ کی کیفیت سے دوچار ہے لیکن شہداء کا خون رائیگاں نہیں جائے گا۔ اس موقع پر شہدائے پشاور کی یاد میں ایک منٹ کی خاموشی بھی اختیار کی گئی۔ تقریب کے اختتام پر سانتا کلاز نے تحائف بھی تقسیم کئے۔