فٹ پاتھ کاروبار اور پارکنگ بن گئے

23 دسمبر 2014
فٹ پاتھ کاروبار اور پارکنگ بن گئے

مکرمی! مکرمی میں حکومت کی توجہ اس طرف مبذول کروانا چاہتی ہوں کہ لاہور میں پیدل لوگوں کے چلنے کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے۔ سڑکوں پر فٹ پاتھ ہونا یا نا ہونا ایک برابر ہے۔ سڑکوں کے کنارے فٹ پاتھ ہوتے تو ہیں مگر وہ اتنے فل ہوتے ہیں کہ ان پر عوام کے گزرنے کی جگہ بھی نہیں ہوتی۔ ان پر یا تو دکانداروں نے اپنی دوکانوں کی چیزیں رکھی ہوتی ہیں یا ٹھیلے والوں کا قبضہ ہوتا ہے۔ کیا فٹ پاتھ ان سب چیزوں کے لئے بنائے گئے ہیں۔ یاعوام کے چلنے اور حادثات سے بچائو کے لئے بنائے جاتے ہیں۔ پھر کہتے ہیں کہ حادثات میںکمی نہیں آ رہی۔ میری حکومت سے یہ گزارش ہے کہ فٹ پاتھ کو عوام کے چلنے کی جگہ ہی رہنے دیا جائے اور ان پر سے پارکنگز اور کاروباری سلسلے ختم کروائے جائیں تاکہ عوام سڑکوں کے بجائے فٹ پاتھ پر چل سکے اور حادثات سے بچ سکے۔ ( ماریہ خالد ایم اے او کالج لاہور)