پاکستان کے نام کی تبدیلی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا: بابر اعوان

22 نومبر 2009
اسلام آباد (اے این این) وفاقی وزیر پارلیمانی امور ڈاکٹر بابر اعوان نے کہا ہے کہ 24 نومبر کو پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں بلوچستان پیکج پیش کر دیا جائے گا‘ پاکستان کے نام کی تبدیلی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔ صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہم اس مرحلے میں داخل ہو گئے ہیں جس کا قوم کو 63 سالوں سے انتظار تھا اب وعدے وعید یا لارے لپے نہیں بلکہ عملی اقدامات ہوں گے جس کا آغاز ہو گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ صدر آصف علی زرداری نے بلوچستان کے مسائل کے حل کیلئے کمیٹی قائم کر دی ہے اور پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس 24 نومبر کو طلب کرلیا گیا ہے جس میں بلوچستان کے حوالے سے آئینی پیکج کو پیش کیا جائے اور بلوچستان کے مسائل کے حل کیلئے روڈ میپ طے کیا جائیگا۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ آئین میں ملک کا نام اسلامی جمہوریہ پاکستان ہے اور یہی رہے گا اس میں تبدیلی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔ آئین میں ترمیم کا واحد راستہ پارلیمنٹ کے اندر دوتہائی کی اکثریت ہے اس کے سوا پارلیمنٹ سے باہر کسی شخص کو آئین میں ترمیم کا اختیار نہیں۔