لوڈشیڈنگ ختم کرنے کی باتیں الیکشن کا ڈھکوسلہ ہیں، عمران متحدہ اپویشن سے الگ نہیں ہوئے، مسائل پارلیمنٹ میں حل نہ ہوں تو روڈ پر آنا پڑتا ہے: خورشید شاہ

22 مئی 2016 (20:32)
لوڈشیڈنگ ختم کرنے کی باتیں الیکشن کا ڈھکوسلہ ہیں، عمران متحدہ اپویشن سے الگ نہیں ہوئے، مسائل پارلیمنٹ میں حل نہ ہوں تو روڈ پر آنا پڑتا ہے: خورشید شاہ

 قائد حزب اختلاف خورشید شاہ نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ میں مسائل حل کرنے پر یقین رکھتا ہوں مسائل جب پارلیمنٹ میں حل نہ ہوں تو روڈ پر آنا پڑتا ہے ۔ عمران خان نے تمام راستے بند ہونے کی صورت میں سڑکوں پر آنے کی بات کی وہ متحدہ اپوزیشن سے الگ نہیں ہوئے۔ پرامید ہوں کہ حکومت مناسب راستہ نکال لے گی۔ حکومت کی جانب سے لوڈشیڈنگ ختم کرنے کی باتیں الیکشن کا ڈھکوسلہ ہے۔ تفصیلات کے مطابق سکھر میں اپنی رہائش گاہ پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے خورشید شاہ نے کہا پانامہ لیکس کا ہنگامہ اب قومی نہیں بلکہ عالمی مسئلہ بن چکا ہے وزیراعظم نواز شریف کی فیملی کی طرف سے جن جائیدادوں سے متعلق پہلے تردید کی جاتی تھی اب ان کے شواہد سامنے آ چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی جمہوریت کے خلاف کسی سازش میں شریک نہیں بلکہ جموریت کے خلاف ہونے والی سازشوں کے سامنے پیپلزپارٹی سیسہ پلائی دیوار ثابت ہوئی ہے ۔ پیپلزپارٹی نے ہمیشہ جمہوریت کو مضبوط بنایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سیاست میں ہمیشہ مذاکرات کے ذریعے آگے بڑھا جاتا ہے۔ اپوزیشن حکومت کے ساتھ ہلڑ بازی یا جھگڑا کرنا نہیں چاہتی بلکہ مذاکرات کے ذریعے تمام مسائل کا حل نکالنا چاہتی ہے۔ حکومت اور اپوزیشن کے درمیان مشترکہ ٹی او آر کی تیاری کے لئے کمیٹی بن چکی ہے۔ اپوزیشن نے اپنے نمائندوں کے ناموں کی فائنل لسٹ حکومت کو پیش کر دی ہے۔ آج یا کل ٹی او آرز بن جائیں گے کچھ لوگ اس کو سبوتاژ کرنے کی کوشش کریں گے۔ انہوں نے کہا میں مسائل پارلیمنٹ میں حل کرنے پر یقین رکھتا ہوں جب مسائل کا حل پارلیمنٹ نہ نکالا جائے تب مسائل کے حل کے لئے سڑکوں پر آنا پڑتا ہے۔ عمران خان متحدہ اپوزیشن سے الگ نہیں ہو رہے بلکہ انہوں نے کہا کہ سارے راستے بند ہونے کی صورت میں سڑکوں پر آئیں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کی جانب سے ملک سے مکمل لوڈشیڈنگ ختم کرنے کی باتیں 2018 کے الیکشن کا ڈھکوسلہ ہیں ملک میں اس وقت بھی 12 سے 14 گھنٹوں کی لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے۔ اس شدید گرمی میں بجلی نہ ہونے کی وجہ سے دیہات میں لوگ مر رہے ہیں ذمہ داری کس پر عائد ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کول منصوبوں سے پنجاب دس بارہ سال کے بعد تباہ ہو جائے گا۔ پنجاب کے کول منصوبوں کا حل بھی ایسا ہو گا جیسے نندی پور کے منصوبے میں اربوں روپے ضائع ہوئے۔ حکومت کو تیل کی موجودہ قیمت میں بجلی 7 روپے فی یونٹ پڑتی ہے اور عوام پر سارا بوجھ ڈالا ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 2012 کے مقابلے میں اس وقت ملک کی ایکسپورٹ 19 جبکہ سرمایہ کاری میں 13 فیصد کمی آئی۔ انہوں نے کہا امریکی ڈو مور کے مطالبے نے پاکستان کو کمزور کیا۔ خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ حکومت کے بڑے اعلانات صرف لولی پاپ ہیں جو جلسے میں کئے جاتے ہیں۔