کل بھوشن یادیو کیس کو منطقی انجام تک پہنچایا جائیگا، آرمی چیف

22 فروری 2017

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر) آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ ہمیں بھارت کی سازشوں اور پاکستان و خطے میں دہشت گردی کی بھارتی حمایت کا بخوبی علم ہے۔ کلبھوشن یادیو کی گرفتاری اس بات کا ثبوت ہے اور اس معاملے کو منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا'۔آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی چیف نے گزشتہ روز لائن آف کنٹرول کے ماٹیوالا سیکٹر کا دورہ کیا اور وہاں تعینات جوانوں سے ملاقات کی۔ اس موقع پر انہوں نے کہا کہ پاک فوج پاکستان اور آزاد کشمیر کے عوام کو ہر طرح کی بھارتی اشتعال انگیزی سے محفوظ رکھنے کے لیے اپنا فرض نبھائے گی۔ 'ہم خود ارادیت کے حصول کے لیے جدوجہد میں مصروف مقبوضہ کشمیر کے عوام سے اظہار یکجہتی کا سلسلہ بھی جاری رکھیں گے ۔ علاقہ کے جنرل آفیسر کمانڈنگ نے آرمی چیف کو آپریشنل تیاریوں پر بریفنگ دی۔آرمی چیف نے فوج کی آپریشنل تیاریوں پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے ہدایت کی کہ 'سرحد پر کسی بھی قسم کی بھارتی اشتعال انگیزی اور سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کا بھرپور اور موثر جواب دیا جائے'۔ انہوں نے کہا کہ 'پاک فوج کے جوان اپنی پیشہ وارانہ اہلیت، جوش و جذبہ اور مادر وطن کے دفاع کے لیے بے غرض وفاداری کی وجہ سے دنیا بھر میں جانے جاتے ہیں اور یہی صلاحیت پاک آرمی کی ریڑھ کی ہڈی ہیں'۔پاک فوج کے سربراہ نے کہا کہ بھارت کی جانب سے سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزیاں سازش کے تحت کی جاتی ہیں۔ ایک جانب بھارتی اشتعال انگیزی کا مقصد کشمیر میں جاری بھارتی فوج کے مظالم سے توجہ ہٹانا ہے تو دوسری جانب یہ دہشت گردی اور شدت پسندی کے خلاف ہماری کارروائیوں کو کمزور کرنے کی سازش ہے۔ آرمی چیف نے کہا کہ بھارت جان بوجھ کر ایل او سی کے اطراف عام شہریوں کو نشانہ بناتا ہے جو کہ قابل مذمت ہے۔ قبل ازیں ایل او سی آمد پر کور کمانڈر راولپنڈی لیفٹیننٹ جنرل ندیم رضا نے آرمی چیف کا استقبال کیا۔