ایک تصویر ایک کہانی

22 فروری 2017

منٹگمری روڈ پر عبدالغفور کاروں اور موٹرسائیکل کی چابیاں بنانے کا کام 20 سال سے کر رہا ہے۔ اس نے بتایا کہ اس کے آٹھ بچے ہیں۔ 4 بیٹے اور 4 بیٹیاں۔ اس مہنگائی کے دور میں 10 افراد کے خاندان کیلئے روزی روٹی کمانا بہت مشکل ہو گیا ہے۔ یہاں فٹ پاتھ پر بیٹھا چابی بنانے کا کام کر رہا ہوں۔ گاڑی کی چابی بنانے کا 100 اور موٹرسائیکل کی چابی کے پچاس روپے لیتا ہوں۔ گھر کا خرچہ چلانے کیلئے گرمی‘ سردی‘ بارش میں چھٹی نہیں کرتا۔ اگر بیمار ہو جاﺅں تو چھٹی کرنا مجبوری بن جاتا ہے‘ لیکن یہ ہوائی روزی ہے۔ کسی دن تو دس بارہ تک بھی چابیاں بناتا ہوں اور کسی کسی دن کوئی بھی چابی بنوانے نہیں آتا تو پھر پریشان ضرور ہوتا ہوں‘ لیکن اللہ تعالیٰ کی رحمت سے مایوس نہیں ہوتا۔ محنت جاری ہے۔ اللہ برکت دینے والاہے۔ گھر کا خرچہ چلا رہا ہوں۔ اس میں اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرتا ہوں(فوٹو: اعجاز لاہوری) 

ایک تصویر ایک کہانی

محمد سلیم 65 سالہ کی عمر میں اپنی موٹرسائیکل پر بچوں کے کھلونے فروخت کرتا ہے ...