ٹرمپ کیخلاف مظاہرے جاری امریکی صدر کا برطانیہ میں شاندار استقبال نہیں ہونا چاہئے: میئر لندن

22 فروری 2017

نیویارک (آن لائن+ نوائے وقت نیوز) واشنگٹن اور نیویارک سمیت کئی امریکی ریا ستوں میں صدر ٹرمپ کے خلاف مظاہروں کا سلسلہ جاری رہا۔ نیویارک میں ہزاروں افراد نے ٹرمپ انٹرنیشنل ہوٹل کے قریب کولمبس سرکل پر مظاہرہ کیا۔ نیویارک کے علاوہ لاس اینجلس، شکاگو ، اٹلانٹا اور واشنگٹن میں بھی صدر ٹرمپ کے خلاف ریلیاں نکالی گئیں۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ صدر ٹرمپ کی پالیسیاں ملک کو نقصان پہنچا رہی ہیں۔ لندن میں صدر ٹرمپ کے مجوزہ دورہ برطانیہ کے خلاف ہزاروں افراد نے مظاہرہ کیا۔ مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈز بھی اٹھا رکھے تھے جن پر تعصب کے خلاف نعرے درج تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ صدر ٹرمپ کے دورے کے لیے اتنی جلد ی کرنا یہ ظاہر کرتا ہے کہ برطانیہ بڑا بے تاب ہے کیونکہ وہ یورپی یونین سے نکل رہا ہے اور چاہتا ہے نئے تجارتی پارٹنر تلاش کرے۔ لندن ہی میں برطانوی پارلیمنٹ کے باہر سینکڑوں افراد نے تارکین وطن کے حق میں مظاہرہ کیا۔ اس مظاہرے کا مقصد حکام پر یہ ظاہر کرنا تھا کہ تارکین وطن کے بغیر برطانیہ کیسا ہوگا؟ اور برطانیہ کی ترقی میں پناہ گزینوں اور تارکین وطن افراد کے کردار کو اجاگر کرنا تھا۔ میکسیکو سٹی میں امریکی سفارت خانے کے قریب بھی ایک مظاہرہ کیا گیا۔ مظاہرین نے ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسیوں کو نفرت انگیز قرار دیتے ہوئے دیوار کی تعمیر کی مخالفت کی۔ ان کا کہنا تھا کہ دیوار کی نہیں بلکہ پلوں کو تعمیر کرنے کی ضرورت ہے۔ امریکی اور میکسیکن عوام مل کر اپنے ممالک کو مزید مضبوط بناسکتے ہیں۔ دریں اثناءبرطانوی شہریوں کے پر زور احتجاج کے بعد لندن کے میئر صادق خان نے بھی امریکی صدر کے برطانیہ کے دورے کی مخالفت کردی۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی تارکین وطن سے متعلق ظالمانہ پالیسیوں پر لندن کے میئر صادق خان نے بھی ان کے برطانیہ کے دورے کی مخالفت کردی ہے۔ایک ٹی وی پروگرام میں صادق خان نے کہا موجودہ صورتحال میں امریکی صدر کا برطانیہ میں شاندار استقبال نہیں ہونا چاہیئے۔ لندن میں ہاﺅس آف پارلیمنٹ کی عمارت پر Trump Say No to کی لائٹ پراجیکشن کر کے ٹرمپ کی برطانیہ آمد کی مخالفت کی گئی۔