سانحہ سہون کی تحقیقات میں اہم پیشر فت 5 سہولت کاروں سمیت 15 گرفتار

22 فروری 2017

کراچی(کرائم رپورٹر)درگاہ حضرت لعل شہباز قلندر پر دھماکے کی تحقیقات میں اہم پیش رفت ہوئی ہے،حساس ادارے نے خیرپور سے 5 سہولت کاروں سمیت 15 افرادکو گرفتار کرلیاہے ۔ واقعے کی تحقیقات کے لئے جے آئی ٹی تشکیل دے دی گئی ہے۔تفصیلات کے مطابق درگاہ حضرت لعل شہباز قلندر پر خود کش حملے کو پانچ روز گزر گئے، سہون کی فضا آج بھی سوگوار دکھائی دیتی ہے ۔ زائرین معمول کے مطابق درگاہ پر حاضری دے رہے ہیں۔ واقعے کی تحقیقات کےلئے جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم تشکیل دےدی گئی ہے۔حساس اداروں نے خیرپور میں کارروائی کے دوران پانچ سہولت کاروں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا ، ذرائع کے مطابق گرفتار سہولت کاروں میں سے 3 کا تعلق شکاپور اور 2 ملزم خیرپور کے رہائشی بتائے گئے ہیں۔رینجرز اور پولیس نے بھی خیرپور میں کومبنگ آپریشن کرتے ہوئے 15 مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا جن میں 7افغان باشندے بھی شامل ہیں۔ ملزمان سے سندھ کی مختلف درگاہوں اور سکولز کی تصاویر برآمد ہوئی ہیں۔اب تک کی جانے والی کارروائیوں میں گرفتار کئے جانے والے سہولت کاروں میں زیادہ تر کا تعلق حفیظ بروہی گروپ سے ہے۔پولیس کے مطابق حفیظ عرف علی شیر بروہی کا تعلق شکارپور کے گاﺅں عبدالخالق پندرانی سے ہے ، ملزم کالعدم لشکر جھنگوی،تحریک طالبان پاکستان ، جیش محمد اور آصف چھوٹو گروپ سے وابستہ رہ چکا ہے ، اس کا نام ریڈ بک میں بھی موجود ہے۔
سانحہ سہون پیشر فت