پیپلز پارٹی نے پنجاب میں اپوزیشن میں بیٹھنے کا فیصلہ کر لیا؟

21 مارچ 2009
اسلام آباد (سجاد ترین / خبر نگار خصوصی) پیپلزپارٹی کے سابق سینیٹر اور ایوان صدر کے ترجمان فرحت اﷲ بابر نے لانگ مارچ کے دوران اپنی ناکامی قبول کرتے ہوئے ایوان صدر میں پارٹی کے اہم رہنماؤں کی موجودگی میں اپنا استعفیٰ پیش کر دیا‘ ذرائع کے مطابق صدر آصف علی زرداری نے استعفیٰ نامنظور کرتے ہوئے ان کو اپنا کام جاری رکھنے کی ہدایت کی‘ دریں اثناء ذرائع کے مطابق اجلاس میں پارٹی رہنماؤں کی اکثریت کا مؤقف تھا کہ مسلم لیگ (ق) سے اتحاد نہ کیا جائے کیونکہ پارٹی قیادت کی جانب سے اس کو قاتل لیگ قرار دیا گیا اور چودھری شجاعت کے والد چودھری ظہور الٰہی نے ضیاء الحق کو کہا تھا کہ جس قلم سے ذوالفقار علی بھٹو کو پھانسی دینے کا حکم دیا گیا ہے وہ قلم مجھے بطور تبرک دیا جائے لہٰذا مسلم لیگ (ق) سے اتحاد نہ کیا جائے‘ ذرائع کے مطابق پیپلز پارٹی کے رہنماؤں کی اکثریت نے مؤقف پیش کیا کہ پنجاب میں پیپلز پارٹی کی حکومت قائم نہیں ہو سکتی تو پھر پیپلز پارٹی کو اپوزیشن میں ہی بیٹھ جانا چاہیئے ذرائع کے مطابق پیپلز پارٹی نے اپوزیشن میں بیٹھنے کا اصولی فیصلہ کر لیا ہے۔
پی پی اپوزیشن / فیصلہ