اٹارنی جنرل بن بلائے سپریم کورٹ پہنچ گئے، چیف جسٹس سے تلخ جملوں کا تبادلہ

20 ستمبر 2012

اسلام آباد (ثناءنیوز )چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری اور اٹارنی جنرل عرفان قادر کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ ہوا ۔چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں بلوچستان بدامنی کیس کی سماعت ہوئی ۔ عدالت نے سیکرٹری داخلہ اور سیکرٹری دفاع آصف یاسین کو طلب کررکھا تھا ۔ لیکن اٹارنی جنرل عرفان قادر بن بلائے پہنچ گئے ۔اس موقع پر چیف جسٹس اور اٹارنی جنرل کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ ہوا ۔ چیف جسٹس نے اٹارنی جنرل سے کہا جب آپ کو نہیں بلایا گیا تو کیوں آئے اس پر اٹارنی جنرل نے ترکی بہ ترکی جواب دیا کہ آپ کو میری حاضری اچھی نہیں لگتی تو نہ بلایا کریں ۔ چیف جسٹس نے کہا کہ عدالت کا آخری حکم پڑھیں آپ کو طلب نہیں کیا گیا ۔ اٹارنی جنرل بولے آپ کا حکم دیر سے موصول ہوتا ہے اورکنفیوز ہوتا ۔ چیف جسٹس نے کہا حکم فوری طور پر تحریر کیا جاتا ہے کیا وہ جھوٹ بول رہے ہیں ۔پھر اٹارنی جنرل نے سخت لہجے میں جواب دیا کہ کیا وہ خود جھوٹ بول رہے ہیں ۔ جس پر چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے انہیں خبردار کیا کہ تہذیب کے دائرے میں رہ کر بات کی جائے ۔