سیلاب سے متاثرہ آخری شخص کی بحالی تک چین سے نہیں بیٹھوں گا : شہباز شریف

20 ستمبر 2012
سیلاب سے متاثرہ آخری شخص کی بحالی تک چین سے نہیں بیٹھوں گا : شہباز شریف

لاہور (خبر نگار) وزیراعلیٰ شہباز شریف نے جنوبی پنجاب میں سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں راجن پور، ڈیرہ غازی خان اور روجھان کے مقامات پر سیلاب زدہ بستیوں کا دورہ، ریلیف کیمپوں کا معائنہ اور متاثرین سیلاب کے متعدد اجتماعات سے خطاب کیا۔ سینئر مشیر سردار ذوالفقار کھوسہ ان کے ہمراہ تھے۔ وزیراعلیٰ نے متاثرہ عوام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں سیلاب سے متاثر ہونے والے آخری فرد کی بحالی اور فصلوں اور مکانات کو پہنچنے والے نقصان کے ازالے تک چین سے نہیں بیٹھوں گا۔ انہوں نے کہا کہ میں ڈاکٹروں کی ہدایت کے باوجود آپ لوگوں کی مصیبت میں آپ کا ساتھ دینے کے لئے یہاں پہنچا ہوں۔ بیماری کی وجہ سے مجھے یہاں آنے میں تاخیر ہوئی لیکن اس عرصے میں میرا دل ہمیشہ متاثرین سیلاب کے ساتھ دھڑکتا رہا اور میں ایک لمحے کیلئے بھی آپ کی مشکلات سے غافل نہیں رہا۔ انہوں نے کہا کہ میں بستر علالت سے بھی متاثرین کی بحالی اور امدادی کارروائیوں کی براہ راست نگرانی کرتا رہا ہوں۔ انہوں نے سیلاب میں جاں بحق ہونے والے افراد کے ورثاءکیلئے پانچ لاکھ روپے فی کس کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ سیلاب کے پانی سے ہونے والے نقصانات کا سروے شروع ہو چکا ہے اور میں بہت جلد دوبارہ آ کر متاثرین سیلاب میں خود امدادی چیک تقسیم کرونگا۔ جن افراد کے مکانات کو نقصان پہنچا ہے ان کی تعمیر نو بھی حکومت پنجاب کے خرچ پر کرائی جائے گی۔ اسی طرح آئندہ فصل کی کاشت کے لئے متاثرین کو بلڈوزر، کھاد اور بیج مفت فراہم کئے جائیں گے۔ موجودہ سیلاب سے مثاترہ افراد کی اسی طرح مدد کی جائے جس طرح 2010ءکے سیلاب میں کی گئی تھی۔ وزیراعلیٰ نے اعلان کیا کہ سرد موسم کے شروع ہونے سے پہلے پہلے متاثرین سیلاب کو حکومت کی طرف سے کمبل، رضائیاں اور گرم بستر بھی فراہم کر دیئے جائیں گے۔ روجھان میں پریس کانفرنس کے نمائندوں نے وزیراعلیٰ سے مطالبہ کیا کہ امدادی کارروائیوں میں دن رات کام کرنے پر ضلعی انتظامیہ کے افسروں کو تعریفی اسناد جاری کی جائیں۔ روجھان میں ہونے والی بریفنگ کے دوران وزیراعلیٰ کو نقصانات کی تفصیل سے آگاہ کیا گیا۔ انہیں بتایا گیا کہ سیلاب سے 226 موضعات، 8 ہزار 870 گھروں اور 93 ہزار ایکڑ فصلوں کو نقصان پہنچا ہے۔ وزیراعلیٰ کی ہدایت کے تحت کی جانے والی امدادی سرگرمیوں کی تفصیل کے مطابق اب تک حکومت پنجاب کی طرف سے مختلف غذائی اور امدادی اشیاءپر مشتمل 193 ٹرک سامان تقسیم کیا جا چکا ہے۔ ڈیرہ غازی خان کے دورے کے دوران وزیراعلیٰ کو بتایا گیا کہ اگر مسلم لیگ (ن) کے موجودہ دور حکومت میں 2 ارب روپے کی لاگت سے تعمیر ہونے والی سیوریج اور ڈرینج کا نیا نظام موجود نہ ہوتا تو شہر کو بہت زیادہ نقصان پہنچ سکتا تھا۔ قبل ازیں وزیراعلیٰ جب سردار ذوالفقار کھوسہ کے ہمراہ ڈیرہ غازیخان پہنچے تو سردار دوست کھوسہ اور سردار عاطف مزاری، کمشنر و ڈی سی او ڈیرہ غازی خان سمیت اعلیٰ افسران اور معززین علاقہ نے ان کا استقبال کیا۔