خط میں وہی لکھیں گے جو آئین کہتا ہے ‘ صدر کے استثنیٰ کا ذکر ہو گا : اٹارنی جنرل

20 ستمبر 2012
خط میں وہی لکھیں گے جو آئین کہتا ہے ‘ صدر کے استثنیٰ کا ذکر ہو گا : اٹارنی جنرل

اسلام آباد (آن لائن) اٹارنی جنرل آف پاکستان عرفان قادر نے کہا ہے کہ سوئس حکام کو لکھے جانے والے خط میں بھی صدر کے استثنیٰ کا ذکر کیا جائیگا۔ خط میں وہی لکھا جائے گا جس کی اجازت آئین دیتا ہے ۔چیف جسٹس آف پاکستان کو ملک ریاض کیس میں گواہ کے طور پر پیش ہونا چاہیے ۔ گزشتہ روز سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اٹارنی جنرل نے کہا کہ صدر زرداری کے استثنیٰ کو سپریم کورٹ نے بھی تسلیم کر لیا ہے جب سوئس حکام کو خط لکھا جائے گا تو اس میں بھی صدر کے استثنیٰ کا ذکر کریں گے ۔ ایک صحافی کے سوال پر کہ آپ تو کہتے تھے کہ خط لکھنا غیر آئینی ہے اس پر اٹارنی جنرل نے کہا کہ جس طرح کا خط ہم لکھیں گے وہ آئینی ہی ہوگا۔ چیف جسٹس کو چاہیے ملک ریاض کیس میں گواہ کے طور پر عدالت پیش ہوں۔ بھارتی سپریم کورٹ کے جج بھی مجسٹریٹ کے سامنے پیش ہو چکے ہیں۔