بھارت کیخلاف پاکستان کا مقدمہ نوائے وقت نے پوری جانفشانی سے لڑا: شاہ محمود

20 مئی 2012
ملتان (نمائندہ نوائے وقت) سابق وزیر خارجہ و پاکستان تحریک انصاف کے وائس چیئرمین مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے بھارت کی جانب سے جب بھی پاکستان کے نظرئیے کور ایشو بالخصوص کشمیر اور پانی کے مسئلہ کو چھیڑا گیا تو مجید نظامی کی قیادت میں نوائے وقت نے پاکستان کا مقدمہ پوری جانفشانی و تندہی کے ساتھ لڑا مجید نظامی نے کمرشلزم کے دور میں بھی نظریاتی صحافت کو مالی مفاد پر ترجیح دی اور ملک میں شرافت اور رواداری کی صحافت کو متعارف کرایا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مجید نظامی کی بطور مدیر روزنامہ نوائے وقت 50 سالہ خدمات کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے نمائندہ نوائے وقت سے خصوصی بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا کہ سیاست کے طالبعلم اور روزنامہ نوائے وقت کے ایک قاری کی حیثیت سے مجید نظامی کو ان کی ستر سالہ خدمات اور روزنامہ نوائے وقت کی ادارت کی گولڈن جوبلی مکمل کرنے پر انہیں مبارکباد اور خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔ انہوں نے کہا ادارت کے پچاس برسوں کا تسلسل اور خدمت کوئی آسان کام نہیں ان پچاس سالوں میں ایوب خان کے کالے قوانین اور آمر پرویز مشرف کے مشکل دور بھی آئے جب جمہوریت کیلئے آواز بلند کرنا خطرے سے خالی نہیں تھا مگر مجید نظامی نے مسلسل جمہوریت اور جمہوری اقدار کے حق میں آواز بلند کی اور حق گوئی کی قیمت متعدد بار اشتہارات کی پابندیوں کی صورت میں برداشت کی۔ انہوں نے کہا نظریہ پاکستان ٹرسٹ کے تحت بھی مجید نظامی نسل نو کو دو قومی نظریہ اور قیام پاکستان کے مقاصد اور تحریک پاکستان بارے آگہی فراہم کرنے کی بھی خدمت انجام دے رہے ہیں۔ مجید نظامی کے ساتھ میرے والد اور میرے تعلقات کسی سے ڈھکے چھپے نہیں۔ انہوں نے متعدد سیمینارز میں میری حوصلہ افزائی کی اور ملتان میں منعقدہ ایک تقریب میں پرویز مشرف کے ریفرنڈم کا بائیکاٹ کرنے پر مجھے ”باغی شہزادہ“ کا خطاب دیا۔ واضح رہے مخدوم شاہ محمود قریشی تقریب اعتراف خدمت میں تاخیر سے پہنچنے کے باعث شرکت نہیں کر پائے تاہم بعد ازاں انہوں نے خصوصی طور پر روزنامہ نوائے وقت ملتان دفتر پہنچ کر مجید نظامی کی صحافتی خدمات کو خراج تحسین پیش کیا۔

مری بکل دے وچ چور ....

فاضل چیف جسٹس کے گذشتہ روز کے ریمارکس معنی خیز ہیں۔ کیا توہین عدالت کا مرتکب ...