بانگِ درا

 اے آفتاب! رُوح و روانِ جہاں ہے تُو
 شیرازہ بندِ دفترِ کون و مکاں ہے تُو
باعث ہے تُو وجود و عدم کی نمود کا
 ہے سبز تیرے دَم سے چمن ہست  و بود کا
بانگِ درا

ای پیپر دی نیشن