لاہور: سبزی منڈی میں پولیس نے تشدد کر کے دکاندار کو مار ڈالا‘ تاجروں کا احتجاج‘ ہڑتال

19 اکتوبر 2016

لاہور (نامہ نگار) راوی روڈ پولیس نے سبزی منڈی میں 47 سالہ دکاندار کو دن دیہاڑے بہیمانہ تشدد کا نشانہ بنا کر موت کے گھاٹ اتار دیا اور نعش چھوڑ کر رفوچکر ہوگئے۔ اس واقعہ پر تاجر سراپا احتجاج بن گئے اور انہوں نے منڈی میں ہڑتال کر کے شدید احتجاجی مظاہرہ کیا۔ مشتعل مظاہرین نے دو پولیس اہلکاروں کو بھی تشدد کا نشانہ بنا ڈالا۔ اقبال ٹائون، زینت بلاک کا 5 بچوں کا باپ سجاد احمد راوی روڈ کے علاقہ سبزی منڈی میں فروٹ کی دکان کرتا تھا۔ گزشتہ روز اسکی دکان پر چھ پولیس اہلکار آئے، انہوں نے سجاد احمد کو تشدد کا نشانہ بنایا او کہا ہمارے ساتھ تھانے چلو، ایس ایچ او نے تمہیں بلایا ہے۔ دیگر دکانداروں نے پولیس کو کہا کہ زبردستی نہ کرو ہم سجاد احمد کو تھانے لیکر خود آتے ہیں مگر پولیس اہلکاروں نے اس بات کا برا منایا، انہوں نے مزید پولیس اہلکاروں کو موقع پر بلا لیا۔ موقع پر 9 پولیس اہلکار مزید آگئے جن میں سب انسپکٹر عمران، سب انسپکٹر سیف اللہ، اے ایس آئی سرفراز، محرر ناصر، پولیس کانسٹیبل شہزاد، شوکت اور فیصل وغیرہ شامل تھے جنہوں نے سجاد احمد کو مکوں، ٹھڈوں اور بندوق کے بٹ مار مار کر موت کے گھاٹ اتار دیا۔ سجاد کی ہلاکت پر پولیس جوان موقع سے فرار ہو گئے۔ مقامی تاجروں نے ریسکیو 1122 کو اطلاع کی۔ ریسکیو ٹیم سجاد احمد کو طبی امداد کیلئے ہسپتال لے گئی جہاں ڈاکٹروں نے اسکی ہلاکت کی تصدیق کردی۔ واقعہ پر تاجر سراپا احتجاج بن گئے۔ انہوں نے شدید احتجاج کرتے ہوئے سبزی منڈی روڈ پر ٹائر جلا کر بلاک کردی اور شدید نعرے بازی کی۔ اطلاع ملنے پر ڈی آئی جی آپریشنز لاہور ڈاکٹر حیدر اشرف موقع پر پہنچ گئے۔ انہوں نے مظاہرین کو انصاف اور ذمہ دار اہلکاروں کیخلاف کارروائی کی یقین دہانی کرائی۔ اس موقع پر مشتعل تاجروں نے اے ایس آئی سرفراز اور ڈی آئی جی کے کارڈز کی خوب پٹائی بھی کی۔ علاوہ ازیں مقتول سجاد احمد کے بھائی اعجاز احمد نے پولیس اہلکارورں کے خلاف قتل کے مقدمہ کے اندراج کیلئے درخواست دی جس پر راوی روڈ تھانہ پولیس نے 14 پولیس اہلکاروں کیخلاف مقدمہ درج کر لیا ہے۔