گیس کی بندش سے شہری پریشان، مریدکے میں خواتین، بچوں کا برتن اٹھا کر احتجاج

19 اکتوبر 2016

لاہور (نیوز رپورٹر+ نامہ نگاران) کئی شہروں میں سوئی گیس کی بندش سے شہری پریشان ہو گئے۔ مریدکے میں خواتین اور بچوں نے گیس کی بندش کیخلاف برتن اٹھا کر احتجاج کیا جبکہ سوئی ناردرن گیس پائپ لائن لمیٹڈ لاہور ریجن کے جنرل مینجر صغیر مسعود نے کہا ہے کہ صوبائی دارالحکومت میں گیس کی بندش اور پریشر میں کمی کا مسئلہ صارفین کو دیکھنے میں نہیں ملے گا۔ صبح 6 سے 9 بجے ناشتے کے اوقات اور شام 6 سے 9 بجے رات کھانے کے اوقات میں صارفین کو مکمل گیس دستیاب ہو گی۔ نوائے وقت سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ رواں سیزن سردیوں میں لوڈمینجمنٹ کے تحت ہی گیس بند کی جائے گی۔ خصوصاً رات کے اس اوقات میں گیس بند کی جائے گی جب گیس کی ضرورت نہیں ہوتی۔ لاہور کے تمام علاقوں میں گیس کا پریشر چیک کرنے کیلئے ٹیمیں سروے کر رہی ہیں۔ جو چند روز تک مکمل کر لیں گی جس کے بعد صارفین کو گیس میں پریشر کی کمی کے مسائل کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا۔ سرگودہا شہر میں سوئی گیس کی غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ شروع کر دیا گیا جس شہریوں کیلئے پریشانیوں میں اضافہ ہوگیا۔ رات کو 9 بجے گیس بند کردی جاتی ہے اور صبح کے اوقات میں صبح 7 بجے گیس کی لوڈ شیڈنگ کردی جاتی ہے جس سے سکول اور دفاتر کو جانیوالے طلباء و طالبات کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ ادھر مریدکے میں 8 گھنٹے کی گیس کی بندش کے باعث عوام کھانے سے محروم ہو گئے۔ ہوٹلوں پر رش ہو گیا۔ روٹی اور نان 12 سے 15 روپے میں فروخت ہوتا رہا۔ خواتین اور بچوں نے برتن اٹھا کر مظاہرہ کیا۔ گذشتہ روز مریدکے شہر و گردونواح میں 8 گھنٹے تک گیس کی لوڈشیڈنگ کی گئی۔اسلام آباد سے نوائے وقت رپورٹ کے مطابق وفاقی وزیر پٹرولیم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ گیس کی لوڈشیڈنگ نہیں ہوتی، پریشر کم کیا جاتا ہے، گیس کی کمی کے باعث رات کو پریشر کم کر دیا جاتا ہے، رات 11 سے صبح 5 بجے تک گیس پریشر میں کمی ہو گی۔ نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے انہوں نے کہا کہ حکومت نے 8 لاکھ نئے گیس کنکشن مہیا کئے۔ نئے لگنے والے منصوبوں سے گیس کی صورتحال بہتر ہو گی۔