32 لاکھ ڈکیتی کا ڈراپ سین ۔۔۔۔۔۔۔مدعی ہی ڈاکو نکلا

19 اکتوبر 2016

خادم کھوکھر
مصطفی آباد کے نواحی گاو¿ں وڈانہ کے قریب مین فیروزپور روڈ پر ہونے والی 32 لاکھ کی ڈکیتی کا ڈراپ سین ہوا، مدعی ہی ڈاکو نکلا، دو ملزمان فریاد اور ادیب الحسن گرفتار، 25 لاکھ روپے ، دو عدد موبائل فون اور دو پستول برآمدکر لئے گئے، ملزم فریاد علی اپنے والدین کا اکلوتا بیٹا ہے جس نے لالچ میں آکر اپنے ہی والد کی رقم ہتھیانے کیلئے ڈکیتی کا ڈرامہ رچایا۔ ڈی پی اونے تفصیلا ت بتاتے ہوئے کہا کہ پولیس کو15 پر اطلاع موصول ہوئی وڈانہ کے قریب نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے اسلحہ کے زور پر کار سوارفریاد علی سے32 لاکھ روپے چھین لئے ہیں انہوں نے بتایا کہ کوٹ حلیم کا رہائشی ملزم فریاد علی جو کہ چمڑاکا کاروبار کرتا ہے گھر سے نقدی 32 لاکھ روپے لے کر اپنی کار نمبری LEB8934 پر لاہور کیلئے روانہ ہوا جب وہ وڈانہ سٹاپ کے قریب مین فیروز پور روڈ پر پہنچا تو پیچھے سے دو نامعلوم ملزمان بسواری کار جس کی نمبر پلیٹ پر ٹیپ لگی ہوئی تھی پر آئے اور اسلحہ کے زور پر روک کر فریاد علی سے نقدی 32 لاکھ روپے چھین کر اور گاڑی پر فائرنگ کرتے ہوئے جانب لاہور فرار ہو گئے۔ اطلاع پا کر ڈی پی او قصور سید علی ناصر رضوی اور ان کی پوری ٹیم فوری موقعہ پر پہنچی اور حالات و واقعات کا جائزہ لیا۔ ڈی ایس پی صدر نے کہا مین فیروز پور پر اتنی بڑی واردات کا ہونا قصور پولیس کیلئے ایک بڑا چیلنج تھا۔ تھانہ مصطفی آباد پولیس نے مسمی فریاد علی کی درخواست پر مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کر دی۔ ڈی پی او قصور سید علی ناصر رضوی نے ملزمان کی گرفتاری کیلئے ڈی ایس پی صدر مرزا عارف رشیدکی سربراہی میںدیگر افسران پر مشتمل ایک سپیشل ٹیم تشکیل دی جنہوں نے واردات کو ہر زاویے سے دیکھا جائے وقوعہ سے شواہد اکٹھے کئے اور ملزمان کے علیحدہ علیحدہ بیانات لئے جن میں تضاد پایا گیا لیکن واردات کے وقت وقوعہ سے آدھا گھنٹہ بعدپولیس کو اطلاع دینا، اسی وقت مدعی فریاد علی کے موبائل فون پر بار بار اس کے سالے ادیب الحسن کا فون آنا اور مین فیروزپور روڈ پر جگہ جگہ ناکہ بندی کے باوجود ملزمان کا فرار ہوجانا بہت سارے شکوک و شبہات کو جنم دے رہا تھا تفتیشی ٹیم نے شک کی بناءپر مدعی فریاد کے سالے ادیب الحسن کو شامل تفتیش کر کے پوچھ گچھ کی تو ادیب الحسن نے انکشاف کیا فریاد علی کے ساتھ کسی قسم کوئی واردات نہ ہوئی ہے بلکہ ہم دونوں نے پلاننگ کر کے فریاد علی کے والد کی رقم ہتھیانے کیلئے ڈکیتی کا ڈرامہ رچایا ہے تفتیشی ٹیم نے اسی مقدمہ کے مدعی فریاد علی کو بھی گرفتار کیا اور ملزمان کے قبضہ سے چھینی جانے والی رقم 25 لاکھ روپے، دو موبائل فون اور دو عدد پسٹل برآمد کر لیے ہیں۔ ڈی پی او نے مزید کہا کہ فریاد اپنے والدین کا اکلوتا بیٹا ہے لالچ میںآ کر فریاد پاکیزہ رشتوں کو بھول گیا اور دولت کی ہوس نے فریاد علی کو اپنے ہی والد کی رقم پر ڈاکہ مارنے پر مجبور کر دیا انہوں نے کہا کہ اب فریاد کااپنے ہی مقدمہ میں بطور ڈاکو چالان ہوا ۔ ڈی پی او قصور سید علی ناصر رضوی نے 32 لاکھ روپے کی واردات ٹریس کرنے پر تفتیشی ٹیم کیلئے تعریفی سرٹیفیکیٹ اور نقدی انعام کا اعلان کیا ہے ۔