نوجوانوں پر جدید ٹیکنالوجی کے منفی اثرات

19 اکتوبر 2016

مکرمی : آج کے نوجوانوں میں انٹرنیٹ کا استعمال کے منفی رویوں اور غیر سماجی سرگرمیوں کا باعث بن رہا ہے پہلے پہل لوگ رابطہ کے لئے اور معلومات کے لئے گھل مل کر رہتے تھے اور ایک دوسرے کے پاس ٹھہرتے تھے لیکن اب یہ سب سرگرمیاں موقوف ہو چکی ہیں جس سے سماجی تعلقات (سوشل انٹر ایکشن) بری طرح متاثر ہوئے ہیں لوگ ہر قسم کی معلومات کو انٹرنیٹ سے حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں ایک تحقیق کے مطابق انٹرنیٹ کے حد سے زیادہ استعمال سے لوگ اس حد تک عاری ہو جاتے ہیں کہ ایک دن کے انٹرنیٹ استعمال نہ کرنے سے ان کی پریشانی اور اعصابی تنا¶ بڑھ جاتا ہے جبکہ مطالعہ یعنی کتابوں کا مطالعہ ہر عمر میں ذہنی امراض سے بچاتا ہے جبکہ انٹرنیٹ کا زیادہ استعمال ذہنی امراض کے پیدا ہونے کا سبب بنتا ہے انٹرنیٹ کا غیر اخلاقی استعمال روز بروز بڑھتا جا رہا ہے اس لئے زیادہ سے زیادہ اس کے مضر اثرات پر توجہ دی جانی چاہیئے اور اس کا استعمال کرنے والوں کو اس کے نقصانات سے بھی آگاہ کیا جانا چاہیئے انٹرنیٹ پر بعض معاشروں کے بالکل برعکس فلمیں اور لٹریچر موجود ہوتے ہیں جس سے نوجوان نسل اور خصوصاً بچے بے راہ روی کا شکار ہو جاتے ہیں اور اکثر بچے مغربی انداز کی فلموں کے اثر سے والدین کی نافرمانی پر اتر آتے ہیں اس لئے اپنے بچوں کو خاص طور پر انٹرنیٹ کے بے جا اور غلط استعمال سے بچانا چاہیئے اس جدید ترین دور میں انٹرنیٹ کا حلقہ اتنا وسیع تر ہو چکا ہے کہ انسان تصور بھی نہیں کر سکتا انٹرنیٹ نے ایک متوازی دنیا قائم کر لی ہے اب تو موبائل ہر نوجوان کی زینت بن چکا ہے یہ کہنا درست ہوگا انٹرنیٹ کے حلقے اور اثرات کا سرسری جائزہ سے ہمیں یہ اندازہ ہوتا ہے کہ آج اسے کئی جہتوں میں استعمال کیا جا رہا ہے طالب علم اسے معلومات کے حصول کے لئے استعمال کرتے ہیں اور یہ ان کے لئے نئے دوست ڈھونڈنے میں بھی معاون و مددگار ہوتا ہے اس کے ذریعے آمدنی بھی ہو سکتی ہے کسی بھی شعبے میں تحقیقات کرنے والوں کے لئے تو یہ کسی نعمت سے کم نہیں اس کی مدد سے آپ نہ صرف اپنے کام بلکہ اپنی ذات کو بھی بہتر انداز میں دنیا کے سامنے پیش کر سکتے ہیں انٹرنیٹ ہی کی بدولت دنیا سمٹ کر ایک ”گلوبل ویلج“ کی شکل اختیار کر گئی ہے اب خبروں کا بہا¶ تیز ہو گیا ہے اور معلومات کاحصول آسان‘ لیکن بدقسمتی سے آج کل کے نوجوانوں کی اکثریت انٹرنیٹ کو سستی تفریح کے لئے استعمال کر رہی ہے جو پریشان کن امر ہے۔ دیکھنے میں آیا ہے کہ انٹرنیٹ کی مدد سے عام افراد بھی تحقیق میں دلچسپی لے رہے ہیں یہ امر خوش آئند ہے تحقیق کی مشق سے انسان کی ذہنی نشو نما ہوتی ہے اور اس میں دوسرے کی بات سننے اور سمجھنے کا عنصر پیدا ہوتا ہے ۔آجکی دنیا انٹرنیٹ کی دنیا ہے یہ معلومات کا ایک بہت بڑا اور بیش خزانہ ہے جہاں آپ کو دنیا بھر کی جدید ترین تحقیقات مفت میں دستیاب ہوتی ہیں انٹرنیٹ کی مدد سے یونیورسٹی کے طلباءاپنے اسائمنٹس بناتے ہیں اور معلومات کو کلاس روم میں باقی اسٹوڈنٹس کے ساتھ شیئر کرتے ہیں انٹرنیٹ کے ذریعے آج کل دنیا بہت زیادہ بزنس بھی کر رہی ہے کیونکہ آج کل اسٹورز‘ شاپنگ مال پرجانے کے بجائے لوگ انٹرنیٹ پر ہی آن لائن کرنا زیادہ پسند کرتے ہیں جہاں ان کو یہ چیزیں مارکیٹ کی بہ نسبت سستی اور کم وقت میں دستیاب ہوتی ہیں انٹرنیٹ کے استعمال سے ہر شخص گلوبل مارکیٹ یا گلوبل اکانومی کا حصہ بن جاتا ہے انٹرنیٹ ہی کی مدد سے آج کی دنیا واقعی گلوبل ویلج بن گئی ہے جہاں آپ اپنی رائے دنیا کے دوسرے ملکوں میں موجود لوگوں تک پہنچاتے ہیں آج کے اس دور میں انٹرنیٹ کی اہمیت و افادیت اس قدر بڑھ چکی ہے کہ اس کی مدد سے لوگ اپنے اہم ترین ڈاکومنٹس یا دستاویزات کو زندگی بھر کے لئے سیو یعنی محفوظ کر سکتے ہیں انٹرنیٹ کی مدد سے کاغذوں میں رکھے جانے والے ریکارڈز جو کہ گھر یا دفتر میں کافی جگہ گھیرتے تھے ۔(ایم سمیع اﷲ آفریدی 0333-9662738 )