ایک سال کے دوران 9 لاکھ افراد کو بنیائی سے متعلقہ سہولیات فراہم کی گئیں

19 جون 2017

اسلام آباد (اے پی پی) الشفاءٹرسٹ آئی ہاسپٹل کے ایگریکٹو ڈائریکٹر برگیڈئیر (ر) رضوان اصغر نے کہا ہے کہ گزشتہ ایک سال کے دوران 9 لاکھ افراد کو بنیائی سے متعلقہ سہولیات فراہم کی گئیں مگر ابھی اس میدان میں بہت کچھ کرنا باقی ہے۔گزشتہ ایک سال کے دوران چالیس ہزار آپریشن کئے گئے،3 لاکھ 50 ہزار مریضوں کو علاج جبکہ 5 لاکھ افراد کو سکرینگ کی سہولت فراہم کی گئی۔ برگیڈئیر (ر) رضوان اصغر نے الشفاءٹرسٹ آئی ہاسپٹل کی سالانہ رپورٹ جاری کرتے ہوئے کہا کہ ہم اپنی خدمات میں سالانہ دس فیصد اضافہ کر رہے ہیں مگر موجودہ صورتحال سے نمٹنے کیلئے ناکافی ہے کیونکہ امراض چشم میں بھی تیری سے اضافہ ہو رہا ہے جسکی وجہ بڑھتی ہوئی آبادی، آلودگی اور بینائی کے مسائل کے متعلق آگاہی کی کمی ہے۔ انھوں نے کہا کہ نجی شعبہ اس سلسلہ میں ذمہ داری اٹھانے سے قاصر ہے۔ جو وائرس، بیکٹریا اور جراثیم انسانی جسم پر حملہ آور ہوتے ہیں وہ آنکھوں پر بھی حملہ کر سکتے ہیں مگر اس میں عام طور پر مریض کو کوئی درد نہیں ہوتا جس سے مسئلہ بگڑ جاتا ہے۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان میں بیس لاکھ افراد بصارت سے محروم ہیں جن میں سے اکثریت کی بینائی کو بر وقت طبی امداد ملنے پر بچایا جا سکتا تھا۔ انھوں نے بتایا کہ ٹرسٹ کے زیر اہتمام راولپنڈی، سکھر، کوہاٹ اور مظفر آباد میں ہسپتال چلائے جا رہے ہیں جبکہ راولپنڈی میں دو سو پچاس بیڈ کے جدید ترین ہسپتال میں چالیس اعلیٰ تعلیم یافتہ ڈاکٹر روزانہ پارہ سو مریضوں کو طبی سہولیات فراہم کرتے ہیں جبکہ اسی سے ایک سو تک آپریشن بھی کئے جاتے ہیں۔