نابالغ ہندو بچیوں کا اغواءاور زبردستی شادیاں سنگین سماجی جرائم ہیں‘ پاکستان ہندو کونسل

19 جون 2017

کراچی (نیوز رپورٹر) پاکستان ہندوکونسل نے سندھ بھر سے نابالغ ہندوبچیوں کے اغواءکے بڑھتے ہوئے واقعات کی روک تھام یقینی بنانے کیلئے ملک گیر احتجاج کا عندیہ دیتے ہوئے سپریم کورٹ سے سوموٹو ایکشن لینے کی اپیل کردی ہے‘ تفصیلات کے مطابق اتوار کو پاکستان ہندو کونسل کا ایک ہنگامی اجلاس منعقد ہوا جس میں سرپرست اعلیٰ اور ممبرقومی اسمبلی ڈاکٹر رمیش کمار وانکوانی‘ ہوچندکرمانی‘ پمن لال راٹھی‘ ڈاکٹر دیپک کمار‘ راجا اسرمال سمیت دیگر شریک ہوئے‘ اجلاس میں تھرپارکر سے نابالغ کم سن ہندو بچی رویتا میگھواژ کا اغوائ‘ جبری مذہب تبدیلی اور زبردستی کی شادی کا معاملہ بطورِ خاص زیرغور آیا‘اس موقع پر ڈاکٹر رمیش وانکوانی کا کہنا تھا کہ خواتین کا اغوا اور زبردستی شادی ایک سنگین سماجی جرم ہے لیکن بدقسمتی سے سندھ میں مذہب تبدیلی کا لبادہ پہنا کر ایک کارخیر کے طور پر پیش کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے سندھ حکومت کو اقلیتوں کے تحفظ کیلئے متفقہ طور پر سندھ اسمبلی میں منظور کردہ بل واپس لینے پر بھی ہدفِ تنقید بنایا۔