” جہنم جا رہی ہوں، وہاں سے مدد بھیجو ں گی“ٹریفل ٹاور میں زندہ جلنے والی اطالوی خاتون کا والدہ کو آخری فون

19 جون 2017

لندن (نیٹ نیوز ) لندن کی کثیر منزلہ عمارت گریفل ٹاﺅن میں لگی خوفناک آگ کے باعث ہلاک ہونے والے افراد کی دردناک کہانیاں سامنے آنا شروع ہوگئیں۔گرینفل ٹاور میں کئی گھنٹوں تک جلتی آگ میں جو30 افراد جل کر خاک ہوگئے، ان میں اٹلی کی 26 سالہ آرکیٹک گلوریا ٹریوزن بھی تھی۔اپنے خاندان کی مالی مشکلات دور کرنے کے لیے اٹلی سے لندن منتقل ہونے والی گلوریا ٹریوزن نے گرینفل ٹاور کی آگ کا لقمہ اجل بننے سے پہلے اپنی والدہ کو فون کیا۔سی این این نے گلوریا ٹریوزن کے اہل خانہ کی وکیل ماریہ کرسٹینا سینڈرن کے حوالے سے اپنی خبر میں بتایا کہ، گلوریا نے مرنے سے پہلے اپنے والدہ کو فون پر کہا’ وہ جہنم جا رہی ہیں، وہاں سے وہ ان کے لیے مدد بھیجیں گی۔
جہنم