87 امریکی اہلکاروں کیلئے ویزے....پاکستان میں سی آئی اے کے آپریشن پھر شروع ہو گئے‘ واشنگٹن پوسٹ

19 جولائی 2011
واشنگٹن (نمائندہ خصوصی+ این این آئی ) امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ نے دعویٰ کیا ہے کہ آئی ایس آئی کے سربراہ لیفٹیننٹ جنرل احمد شجاع پاشا کے حالیہ دورہ واشنگٹن میں یہ طے پایا ہے کہ سی آئی اے پاکستان میں اپنی معمول کی سرگرمیاں دوبارہ شروع ہو گئیں اور اسکے بدلے میں امریکی ایجنسی اپنے اہلکاروں کی سرگرمیوں کے حوالے سے زیادہ معلومات کا تبادلہ کریگی۔ پاکستان نے سی آئی اے کے 87اہلکاروں کیلئے ویزوں کے اجراءکی منظوری بھی دیدی۔ اخبار میں ایک مضمون شائع ہوا ہے جس میں امریکی اور پاکستانی حکام کے حوالے سے آئی ایس آئی کے سربراہ لیفٹیننٹ جنرل احمد شجاع پاشا اور سی آئی اے کے قائم مقام ڈائریکٹر مائیکل مورل کے درمیان طے پانیوالے معاملات کی مزید تفصیلات دی گئی ہیں۔ واشنگٹن پوسٹ نے اپنے مضمون میں لکھا ہے کہ پاکستان نے ملک میں کام کرنیوالے سی آئی اے کے افسروں کو 87 ویزے جاری کرنے کی منظوری دیدی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ سی آئی اے اور آئی ایس آئی کے انسداد دہشت گردی کے مشترکہ آپریشن بحال ہوچکے ہیں۔ مضمون نگار کے مطابق امریکی حکام کی طرف سے ڈاکٹر شکیل آفریدی کی رہائی کا معاملہ اٹھایا اور انکی رہائی پر زور دیا جس نے ایبٹ آباد میں اسامہ کے خاندان کا ڈی این اے حاصل کرنے کیلئے سی آئی اے کے تعاون سے پرائیویٹ ویکسی نیشن مہم چلائی تھی جسے بعد میں آئی ایس آئی نے گرفتار کر لیا۔ ایک اور اہم معاملہ صحافی سلیم شہزاد کا قتل ہے جس میں امریکہ سمجھتا ہے کہ آئی ایس آئی ملوث ہے۔
واشنگٹن پوسٹ