تبلیغی اجتماع : بم دھماکے خودکش حملے اسلام پھیلانے کے مشن سے نہیں روک سکتے : علماءکا خطاب

18 نومبر 2012


رائے ونڈ (عاطف محمود سبزواری) تبلیغی اجتماع میں ہفتہ کے روز شرکاءکی تعداد جمعہ کے مقابلے میں کئی گنا بڑھ گئی، جو 8لاکھ سے زائد ہے۔ اجتماع کے دوسرے مرحلہ کے تیسرے دن ہفتہ کو تبلیغی اجتماع کی مختلف نشستوں سے ممتاز مبلغین اسلام اور علمائے کرام مولانا محمد جمیل، مولانا محمد سعد، مولانا محمد احمد بہاولپوری اور مولانا احمد لاٹ انڈیا والوں نے مختلف موضوعات پر تقاریر کیں۔ ان کا کہنا تھا کہ سب کچھ اللہ کی جانب سے ہونے کا یقین ہی اصل ایمان ہے، بم دھماکے اور خودکش حملے مسلمانوں کو اسلام پھیلانے کے مشن سے روک نہیں سکتے، تبلیغی اجتماع اللہ کی خاص حفاظت میں منعقد ہو رہا ہے، اپنی موت پر اسی طرح یقین ہے جس طرح آپ کے سامنے بیان کرتے ہوئے آواز سنائی دے رہی ہے اور اس کا ایک وقت متعین ہے جسے کوئی ٹال نہیں سکتا، فکر صرف یہ ہے کہ موت آنے سے پہلے اس کی تیاری ہو جائے تاکہ موت حالت ایمان میں آئے۔ انہوں نے کہا کہ جب سے مسلمانوں نے دعوت و تبلیغ کے کام کو بے معنی سمجھ لیا ہے وہ پستیوں میں گرتا جارہا ہے، ایمان کمزور ہونے سے دشمن غالب آتا جا رہا ہے، نئے سرے سے نبیوں والی سنت پوری کرتے ہوئے کمربستہ ہوکر بستیوں میں نکلنا پڑے گا، جب تک دوست بھائی کا ایمان پکا ہونے کی فکر نہیں کریں گے اپنا ایمان بھی ڈول جائے گا، ایک ایک انسان کو اللہ کا اور اس کے پیارے رسول کا پیغام پہنچانے کی ذمہ داری نبھانی ہے اور ساری عمر نبھاتے رہنا ہے، جس طرح روزانہ کھاتے پیتے ہیں سوتے جاگتے ہیں،کاروبار کرتے ہیں خوشی غمی میں اس کام کو جاری رکھنا معمول بنانا ہوگا اگر روٹی کھانا نہیں بھول سکتے تو یہ کام تو روٹی کھانے سے بھی ضروری ہے، اللہ کے غیر سے دھیان ہٹانا ہوگا، اصل تعلیم اسلام کی ہے اور اصل علم بھی اسلام کا ہے، ایجادات اور کارنامے صرف دنیا کی حد تک محدود ہیں، دعوت و تبلیغ ہی پورے عالم پر اسلام کا غلبہ پانے کا اصل راستہ ہے، آج اتوار کو اجتماعی دعا تقریباً دس بجے امیر تبلیغی جماعت مولانا زبیر الحسن کروائیں گے جس کے بعد جماعتوں کی تشکیل کا سلسلہ شروع ہوگا ،اور اگلے سال کیلئے اجتماع کی تاریخ کا تعین کیا جائے گا۔