اردو کے نامور ادیب سجاد نقوی وفات پا گئے

18 نومبر 2012


لاہور (ادبی رپورٹ) اردو کے نامور ادیب سجاد نقوی گذشتہ روز مختصر علالت کے بعد سیالکوٹ میں وفات پا گئے ۔ ان کی عمر 80 برس تھی۔ سجاد نقوی رسالہ ”اوراق“ کے مدیر معاون تھے۔ انہوں نے گورنمنٹ کالج سرگودھا میں اردو کے لیکچرار کی خدمات انجام دیں۔ 1991ءمیں ریٹائرمنٹ کے بعد لاہور آگئے تھے۔ سجاد نقوی اردو کے ممتاز افسانہ نگار غلام الثقلین نقوی کے چھوٹے بھائی تھے اور دبستان سرگودھا میں ڈاکٹر وزیر آغا کے دست راست شمار ہوتے تھے۔ وہ ادب کی تخلیقی اصناف پر گہری نظر رکھتے تھے۔ اور خود بھی تنقید اور افسانہ لکھتے تھے۔ ”ٹیلے سے ٹیلے تک“ ان کا کلاسیکی افسانہ ہے جس میں علامت کا استعمال بڑی دانشمندی سے کیا گیا ہے۔ ان کے تنقیدی مضامین کی کتاب ”مطالعے“ پر سیکنڈری بورڈ سرگودھا نے ایوارڈ دیا تھا۔ انور گوئندی نے سرگودھا سے رسالہ ”کامران“ نکالا تو اس کی ادارت میں بھی انہوں نے گراں قدر خدمات انجام دیں۔ سجاد نقوی کی وفات سے اردو ادب کا ایک اہم شناسا اور ایک ذی شعور نقاد رخصت ہو گیا ہے۔ انکے پسماندگان میں تین بیٹے اور تین بیٹیاں شامل ہیں۔