مشرف غداری کیس: حکومت کی دلچسپی کم ہونے لگی، 5 سماعتیں بغیر کارروائی کے ملتوی

18 جولائی 2015

اسلام آباد (ٹیرنس جے سیگامنی / نیشن رپورٹ) وفاق نے جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کیخلاف غداری کیس میں دلچسپی لینا کم کردی ہے جس کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ 24 دسمبر 2014ءسے جون تک یہ کیس 5 مرتبہ خصوصی عدالت میں پیش کیا گیا مگر اسکی سماعت بغیر کارروائی کے معطل کردی گئی۔ وفاق جو اس کیس میں استغاثہ کے سینئر قونصلر کیس کی سماعت کے دوران پیش نہیں ہوئے جبکہ آخری دو سماعتوں کے دوران خصوصی عدالت کے رجسٹرار نے سماعت ملتوی ہونے کا اعلان کیا۔ ایک پراسیکیوٹر نے ”دی نیشن“ کو بتایا کہ جب سے اسلام آباد ہائیکورٹ نے خصوصی عدالت کی کارروائیوں کیخلاف سٹے دیا ہے، خصوصی عدالت کے سامنے پیش ہونے کی ضرورت نہیں رہی تاہم اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس نورالحق قریشی اور جسٹس عامر فاروق پر مشتمل ڈویژن بنچ نے 8 جولائی کو واضح کیا تھا کہ ہائیکورٹ نے خصوصی عدالت کو غداری کیس کی سماعت سے نہیں روکا۔ واضح رہے 23 دسمبر 2014ءکو اسلام آباد ہائیکورٹ نے شوکت عزیز، سابق وزیر قانون زاہد حامد اور جسٹس ریٹائرڈ عبدالحمید ڈوگر کی رٹ پٹیشن پر خصوصی عدالت پر پروسیڈنگز کو روکا تھا۔ 21 نومبر 2014ءکو خصوصی عدالت نے حکومت کو مرکزی حکومت کو ترمیم شدہ یا اضافی بیان اور شوکت عزیز، عبدالحمید ڈوگر اور زاہد حامد کیخلاف باضابطہ الزامات جمع کرانے کی ہدایت کی تھی۔
مشرف غداری کیس