عوام نے یوم سیاہ کا فیصلہ مسترد کر دیا: مصطفٰی کمال، جو ہم پر شک کریگا ہم اس پر کرینگے: فاروق ستار

18 اگست 2017

کراچی (خصوصی رپورٹر+ نوائے وقت رپورٹ) متحدہ قومی موومنٹ (پاکستان ) کے سربراہ ڈاکٹر محمد فاروق ستار نے کہا ہے کہ سندھ کے شہریوں میں اس مرتبہ ایم کیوایم پاکستان کی کال جس جوش‘ جذبے اور ولولہ کے ساتھ پاکستان کی آزادی کا 70 واںجشن منایا گیا ہے شاید اس سے قبل نہیں منایا گیا‘ اس جوش و خروش‘ جذبہ اور ولولہ پر کسی اور کی جانب سے ہماری حب الوطنی پر سوال نہیں اٹھایا گیا بلکہ لندن سے کھلا اعلان جنگ کیا گیا تھا اور یوم آزادی کو یوم سیاہ کے طور پر منانے کا اعلان کیا گیا‘ پاکستان میں سیاست کرنے کیلئے سیاسی جماعت بنانا ایک عمل ہے لیکن آئین اورریاست پاکستان کی نفی کرنا‘ پوری دنیا میں یوم آزادی کے موقع پر یوم سیاہ منانا اور کچھ پاکستانیوں کو ورغلا کر ان کے ذریعے سے پاکستان کے پرچم نذر آتش کرنا انتہائی قابل مذمت عمل ہے‘ اس یوم سیاہ کا لاکھوں کروڑوں مہاجروں نے بائیکاٹ کرکے یہ بتا دیا کہ پاکستان کے مختلف طبقات اور اکائیوں میں اگر آج بھی سب سے زیادہ محب وطن کوئی اکائی ہے تو وہ پاکستان بنانے والے اور ان کی اولادیں اور مہاجر ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ جو ہماری حب الوطنی پر شک کرتا ہے ہم اس کی حب الوطنی پر شک کریں گے۔ یوم آزادی کے خلاف یوم سیاہ منانے کا اعلان لندن سے کیا گیا تھا، یوم آزادی پر یوم سیاہ منانا، پرچم جلوانا انتہائی قابل مذمت ہے، کچھ افراد کو ورغلا کر یوم سیاہ منانے کا عمل قابل مذمت ہے۔ پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین مصطفٰی کمال کہتے ہیں کہ ایم کیو ایم لندن نے یوم آزادی کو یوم سیاہ کے طور پر منانے کی کوشش کی جسے کراچی کی عوام نے مسترد کر دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ بانی متحدہ ویڈیوز بنا کر را سے پیسے لیتے ہیں، انکے خلاف جو کچھ کہا تھا آج سچ ثابت ہو رہا ہے۔ ایم کیو ایم پاکستان کی وجہ سے لندن اور بانی متحدہ پھر سے مضبوط ہوئے۔