ہائیکورٹ: چیئرمین پی سی بی کیخلاف درخواست، آئین کی کاپی طلب

18 اگست 2017

لاہور (وقائع نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ نے چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی کی تعیناتی کے خلاف دائر درخواست آج تک ملتوی کرتے ہوئے درخواست گزار کو پی سی بی آئین کی کاپی پٹیشن کے ہمراہ لف کرنے کی ہدائت کر دی۔ لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس مامون رشید شیخ نے کیس کی سماعت کی۔ درخواست گزار ناصر اقبال کی وکیل ناہید بیگ نے موقف اختیار کیاکہ نجم سیٹھی کو پی سی بی آئین کیخلاف چیئرمین تعینات کیا گیا۔سابق پیٹرن ان چیف میاں نواز شریف نے نجم سیٹھی اور عارف اعجاز کو بطور بورڈ آف گورنر توسیع دی انھوں نے نوجولائی کو ہی چھ اگست سے بورڈ ممبرز کی نامزدگی کر دی جبکہ چھ اگست سے پہلے شہریار کی مدت بھی مکمل نہیں ہوئی تھی۔انہوں نے کہا کہ شہریار خان کی مدت مکمل ہونے سے پہلے بورڈ ممبران کی نامزدگی نہیں کی جا سکتی۔ انہوں نے کہا کہ سابق پیٹرن نواز شریف جولائی میں بطور وزیر اعظم نااہل ہوگئے اور نااہلی کے بعد نواز شریف کی جانب سے پی سی بی کے بورڈ آف گورنر کی تعیناتی کے لیے جاری احکامات بھی غیر مو ثر ہو چکے ہیں ۔لہذا نجم سیٹھی اور عارف اعجاز کا 6 اگست کے لیے بطور بورڈ آف گورنر نوٹیفکیشن بھی اپنی حیثیت کھو چکا ہے اس لیے نجم سیٹھی کی تعیناتی پی سی بی کے قوانین کی صریحا خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے استدعا کی کہ چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی کی تعیناتی کو غیر قانونی اور کالعدم قرار دیا جائے۔ جس پر فاضل عدالت نے چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی کی تعیناتی کے خلاف دائر درخواست آج تک ملتوی کرتے ہوئے درخواست گزار کو پی سی بی آئین کی کاپی پٹیشن کے ہمراہ لف کرنے کی ہدائت کر دی۔