نوجوان داعش کا خصوصی نشانہ ہیں ، شارٹ کٹ کی بجائے قانون ، میرٹ کی پاسداری کریں: آرمی چیف

18 اگست 2017

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر)آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ ہر پاکستانی آپریشن رد الفساد کا سپاہی ہے۔ فوج ایک محفوظ اور مستحکم ملک دینے کیلئے پرعزم ہے۔فوج نے ملک کو دہشت گردی سے نجات دلانے کی اہم کامیابی حاصل کیہے لیکن پائیدار امن کے قیام کیلئے سب کو اپنا حصہ ڈالنا ہو گا۔ آرمی چیف نے جمعرات کے فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کےا دورہ کیا اور وہاں انٹرن شپ مکمل کرنے والے نوجوانوں سے خطاب اور بعد ازاں ان کے سوالات کے جوابات دیتے ہوئے ان خیالات کا اظہار کیا۔انہوں نے طلبہ کو اس پروگرام کی کامیاب تکمیل پر مبارک باد پیش کی۔انہوں نے کہا کہ قدرت نے پاکستان کو سب سے زیادہ باصلاحیت اور متحرک نوجوان عطا کئے ہیں اور ملک کا مستقبل ان ہی نوجوانوں سے وابستہ ہے۔انہوں نے اس یقین کا اظہار کیا کہ نوجوان اپنی صلاحیتوں سے ھبرپور استفادہ کرتے ہوئے پاکستان کو ترقی اور امن کی نئی بلندیوں سے ہمکنار کریں گے۔انہوں نے نوجوانوں کو ہدائت کی کہ وہ اپنی ذات پر اعتماد رکھیں، قانون و میرٹ کی پاسداری کریں، اور کامیابی کے حصول کیلئے شارٹ کٹ اختیار نہ کریں۔ ان سے سوال کیا گیا کہ نہائت مشکل حالات میں وہ اپنا حوصلہ کیسے برقرار رکھتے ہیں تو آرمی چیف نے جواب دیا کہ فوج کی انتھک کوششیں اور ملک کے شاندار مستقبل کی امید ان کا حوصلہ اور ہمت قائم رکھتی ہے۔انہوں نے طلبہ سے کہا کہ فوج انہیں ایک محفوظ اور مستحکم ملک فراہم کرے گی۔ فوج تمام تر داخلی اور بیرونی چیلنجوں سے نمٹنے کی استعداد رکھتی ہے۔انہوں نے طلبہ کو ہدائت کی کہ وہ سوشل میڈیا پر چلنے والے مخالفانہ بیانیہ سے ہشیار رہیں۔انہوں نے کہا کہ لکھے پڑھے نوجوانوں کو زیادہ احتیاط کی ضرورت ہے کیونکہ وہ آئی ایس آئی ایس (داعش) اور اس کی ذیلی تنظیموں کا خصوصی نشانہ ہیں۔زندگی میں آپ کی کامیابی، اللہ پر پختہ یقین، والدین کی خدمت اور سخت محنت کے تین اصولوں میں مضمر ہے۔