پرائیویٹ ہاسٹلز میں بنیادی سہولیات کی عدم فراہمی

18 اگست 2017

مکرمی! آپ کے اخبار کی توسط سے ایک اہم مسئلہ وزیراعلیٰ پنجاب کے گوش گزار کرنا چاہتی ہوں جیسا کہ آج کے دور میں تعلیم کے شعبے میں مقابلے کی فضا پیدا ہو چکی ہے۔ نوجوان نسل خصوصاً طالبات اعلیٰ تعلیم حاصل کرکے ملک و قوم کی ترقی اہم کردار ادا کرنا چاہتی ہیں دور دراز سے پڑھائی کےلئے آنےوالی طالبات کو سب سے بڑا رہائش کا مسئلہ درپیش ہوتا ہے۔ اگرچہ گلگشت کالونی کے مختلف علاقوں میں قائم گرلز اور بوائز ہوسٹلز اس مقصد کا تدارک کرتے ہیں لیکن دیکھنے کی بات یہ ہے ہوسٹلز میں بھاری معاوضے تو وصول کئے جاتے ہیں لیکن بنیادی سہولیات تک دستیاب نہیں ہوتیں۔ ایک ڈربے نما کمرے میں چار چار طالبات کو ٹھونس دیا جاتا ہے۔ ایسے میں نہ پڑھائی کا ماحول بنتا ہے نہ ہی پرائیویسی قائم رہتی ہے۔ میس کے نام پر دال روٹی کھلا کر ہزاروں کا بل تھمادیا جاتا ہے۔ ہماری وزیراعلیٰ پنجاب اور ڈی سی او ملتان سے گزارش ہے کہ وہ ہوسٹل مالکان کو پابند کریں کہ وہ طالبات کو بنیادی سہولتوں کی فراہمی ممکن بنائیں۔ ان کے اصول و ضوابط مرتب ہونا بہت ضروری ہیں تاکہ رہائش کے نام پر لوٹ مار کا یہ بازار بند ہو سکے۔ ارم ستار