ساقی نامہ

18 اگست 2017

اقبال صدف
ترے ہاتھوںمیںکیسامعرفت کاجام ہے ساقی
کہ توخودبھی تہی دامن ہے تشنہ کام ہے ساقی
طریقت عشق ہے اور ہیںشریعت میں رُموز اس کے
طریقت بے شریعت ایک شغلِ خام ہے ساقی
تصور لاکھ ہو ان کا پہ جب دل ہی صیقل ہو
تو پھر یہ بزم جاناں محفلِ اوہام ہے ساقی
نفس کی پیروی میں ِفقر کی منزل نہیں ملتی
نفس تو خواہشوں کا بندہ بے دام ہے ساقی
مجھے اوروں سے کیا نسبت‘ مجھے اوروں سے کیا لینا
کہ مجھ پر شاہ دو عالم کا لطف عام ہے ساقی
کسی پہ جان کیوں دوں میں‘ اسے اوروں پہ کیوں واروں
عطا کی زندگی جس نے اسی کے نام ہے ساقی
تری دنیا سیاست ہے ترا دین بھی سیاست ہے
اسی خاطر تو ہر اک کام میں ناکام ہے ساقی
حقیقت صرف اتنی ہے خدا لگتی صدف یہ ہے
کہ ہم بھی ہیں غلط کچھ اور کچھ بدنام ہے ساقی